Abbas ka aaqa pyasa hai
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Abbas piye kaise pani Abbas ka aaqa pyasa hai
Khaime may Sakina pyasi hai aur bacha bacha pyasa hai

abbas ne jab peene ko kaha rehwaar ne bhi moo phayr liya
matlab tha yehi mai kaise piyoo baysheer hamara pyasa hai
abbas piye kaise...

barsaat ka mausam bhi to nahi pani ka barasna na mumkin
darya bhi udoo ki qaid may hai shabbir ka kunba pyasa hai
abbas piye kaise...

paaya jo sakina ne pani ye kehke badhi maqtal ki taraf
asghar ko pilaungi pehle nanha mera bhaiya pyasa hai
abbas piye kaise...

jab shere khuda ne pyaso ko kausar pa diya jaame kausar
moo phayr liya sab ne kehkar ahmed ka nawasa pyasa hai
abbas piye kaise...

laaghar hai bahot bemaar bhi hai zanjeer badan se bhaari hai
durre na laga abid ki shaqi wallah ye bhooka pyasa hai
abbas piye kaise...

azaad hui itrat lekin zindan may sakina hai ab tak
chidkao lehad par kaun kare har zarra zarra pyasa hai
abbas piye kaise...

ashkon ke ye jharne aankhon se chauda sau baras se jaari hai
sairaab abhi tak ho na saka rumaale zehra pyasa hai
abbas piye kaise...

abbas ka jisme zikr na ho baysheer ki jisme pyas na ho
kitne bhi masayab ho anwar lekin wo noha pyasa hai
abbas piye kaise

عباسؑ پیئے کیسے پانی،  عباسؑ کا آقا پیاسا ہے
خیمے میں سکینہؑ پیاسی ہے،  اور بچہ بچہ پیاسا ہے

عباسؑ نے جب پینے کو کہا،  رہوار نے بھی منہ پھیر لیا
مطلب تھا یہی میں کیسے پیئوں،  بے شیرؑ ہمارا پیاسا ہے
عباسؑ پیئے کیسے پانی ۔۔۔۔۔

برسات کا موسم بھی تو نہیں،  پانی کا برسنا ناممکن
دریا بھی عدو کی قید میں ہے،  شبیرؑ کا کنبہ پیاسا ہے
عباسؑ پیئے کیسے پانی ۔۔۔۔۔

پایا جو سکینہؑ نے پانی،  یہ کہہ کے بڑھی مقتل کی طرف
اصغرؑ کو پلاؤں گی پہلے،  ننھا میرا بھیا پیاسا ہے
عباسؑ پیئے کیسے پانی ۔۔۔۔۔

جب شیرِ خدا نے پیاسوں کو،  کوثر پہ دیا جامِ کوثر
منہ پھیر لیا سب نے کہہ کر،  احمدؐ کا نواسا پیاسا ہے
عباسؑ پیئے کیسے پانی ۔۔۔۔۔

بیمار بھی ہے زنجیر بدن سے،  بھاری ہےلاغر ہے بہت
دُرّے نہ لگا عابدؑ کے شقی،  واللہ یہ بھوکا پیاسا ہے
عباسؑ پیئے کیسے پانی ۔۔۔۔۔

آزاد ہوئی عترت لیکن،  زندان میں سکینہؑ ہے اب تک
چھڑکاؤ لحد پر کون کرے،  ہر ذرّہ ذرّہ پیاسا ہے
عباسؑ پیئے کیسے پانی ۔۔۔۔۔

اشکوں کے یہ جھرنے آنکھوں سے،  چودہ سو برس سے جاری ہیں
سیراب ابھی تک ہو نہ سکا،  رومالِ زہراؑ پیاسا ہے
عباسؑ پیئے کیسے پانی ۔۔۔۔۔

عباسؑ کا جس میں ذکر نہ ہو،  بے شِیر کی جس میں پیاس نہ ہو
کتنے بھی مصائب ہوں انور،  لیکن وہ نوحہ پیاسا ہے
عباسؑ پیئے کیسے پانی ۔۔۔۔۔