Abbas ki wafa ko shabbir ka salam
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Abbas ki wafa ko shabbir ka salam
Zehra ki shahzadi hamsheer ka salam

bachon ke dil ki dhadkan shabbir ka qaraar
tishna labon ka saqqa qaimo ka pehredaar
iske liye hai zainabe dilgeer ka salaam
abbas ki wafa....

darya pe karke qabza jo tashnalab raha
chullu may leke pani pani nahi piya
abbas tujhko sabr ki jageer ka salam
abbas ki wafa....

_______________________________________

abbas ka alam tha ke zainab ki rida thi
ghazi tere parcham ki hawa may bhi wafa thi
haider ki tamanna-on ka markaz tera paikar
humrah tere fatema zahra ki dua
_______________________________________

abbbas ke alam ki dunya may roshni
phaili to milgayi hai wafaon ko zindagi
bazme ghame hussain ki tanveer ka salam
abbas ki wafa....

jo aankh tere rouze ke hai khaab dekhti
us khaab may hai roohe aaqedat chupi huvi
pakeezagi ye khaab ko tabeer ka salam
abbas ki wafa....

jiske laahu se parchame islam hai dhula
pehchaan us dilayr ki mashkeeza hogaya
ghazi ko mere warise tatheer ka salam
abbas ki wafa....
______________________________________

shane qalam karaadiye pani jo chuliya
qaime may uss dilayr ka laasha nahi gaya
sharminda tha sakina se hyder ka laadla
abbas tujhko roegi ta hashr karbala
______________________________________

baazu katake jisne rakhli wafa ki laaj
karti hai jisko sajda uski wafaen aaj
us bawafa ko maadare shabbir ka salam
abbas ki wafa....

asghar bhi tashnalab to ghazi bhi tashnalab
bejurm qatl ye huwa aur wo bhi besabab
us faatahe faraat ko baysheer ka salam
abbas ki wafa....

rehan mai ghulam hoo hyder ke sher ka
mere qalam ko soz hai abbas ne diya
nowhon may dhal gaya meri tehreer ka salam
abbas ki wafa

عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام
زہراؑ کی شہزادی ہمشیر کا سلام

بچوں کے دل کی دھڑکن شبیرؑ کا قرار
تشنہ لبوں کا سقّہ خیموں کا پہرے دار
اُس کے لیے ہے زینبِ دلگیرؑ کا سلام
عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام

دریا پہ کر کے قبضہ جو تشنہ لب رہا
چُلّو میں لے کے پانی پانی نہیں پیا
عباسؑ تجھ کو صبر کی جاگیر کا سلام
عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام
_______________________________________

عباسؑ کا علم تھا کہ زینبؑ کی ردا تھی
غازیؑ تیرے پرچم کی ہوا میں بھی وفا تھی
حیدرؑ کی تمنا اُن کا مرکز تیرا پیکر
ہمراہ تیرے فاطمہ زہراؑ کی دُعا
_______________________________________

عباسؑ کے علم کی دُنیا میں روشنی
پھیلی تو مل گئی ہے وفاؤں کو زندگی
بزمِ غمِ حسینؑ کی تنویر کا سلام
عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام

جو آنکھ تیرے روضے کی ہے خواب دیکھتی
اُس خواب میں ہے روحِ عقیدت چھُپی ہوئی
پاکیزگیِءِ خواب کو تعبیر کا سلام
عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام

جس کے لہو سے پرچمِ اسلام ہے دھُلا
پہچان اُس دلیر کی مشکیزہ ہو گیا
غازیؑ کو میرے وارثِ تطہیر کا سلام
عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام
______________________________________

شانے قلم کرا دیئے پانی جو چھُو لیا
خیمے میں اُس دلیر کا لاشہ نہیں گیا
شرمندہ تھا سکینہؑ سے حیدرؑ کا لاڈلا
عباسؑ تجھ کو روئے گی تا حشر کربلا
______________________________________

بازو کٹا کے رکھ لی جس نے وفا کی لاج
کرتیں ہیں جس کو سجدہ اُس کی وفائیں آج
اُس باوفا کو مادرِ شبیرؑ کا سلام
عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام

اصغرؑ بھی تشنہ لب تو غازیؑ بھی تشنہ لب
بے جرم قتل یہ ہوا اور وہ بھی بے سبب
اُس فاتحِ فرات کو بے شیرؑ کا سلام
عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام

ریحان میں غلام ہوں حیدرؑ کے شیر کا
میرے قلم کو سوز ہے عباسؑ نے دیا
نوحوں میں ڈھل گیا میری تحریر کا سلام
عباسؑ کی وفا کو شبیرؑ کا سلام