Shaam aa rahi hai dil per hazaro
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Beti Ali ki

Shaam hai shaam (x5)

Shaam aa rahi hai dil per hazaro, Sadme uthaye beti Ali ki (x3)

Haste hai saare baazar waale (x2)
Roti hai haaye beti Ali ki

Shaam aa rahi hai dil per hazaro, Sadme uthaye beti Ali ki (x2)


1. Tha jis ka bhayi Abbas-e Ghazi, Hain aaj qaidi wo shahazadi (x2)
Ye shor sun kar ghairat ke maare (x2)
Kahi mar na jaaye beti Ali ki
Shaam aa rahi hai dil per hazaro, Sadme uthaye beti Ali ki

2. Chaaro taraf hai mahaul aisa, Jaise laga ho koyi tamasha (x2)
Abbas aaja chadar urha jaa (x2)
Ghabraa na jaaye beti Ali ki
Shaam aa rahi hai dil per hazaro, Sadme uthaye beti Ali ki

3. Barsaa rahe hai pathar sitamgar, Lagte hai pathar Bibi ke sar per (x2)
Bazoo bandhe hai bebas hai khud ko (x2)
Kaise bachaaye beti Ali ki
Shaam aa rahi hai dil per hazaro, Sadme uthaye beti Ali ki

4. Zulfe pakar kar Shimr-e layee ne, Maare tamaache tarpi Sakina (x2)
Zainab ke dono bazoo bandhe hai (x2)
Kaise churaaye beti Ali ki
Shaam aa rahi hai dil per hazaro, Sadme uthaye beti Ali ki

5. Wada kiya tha usney khuda sey, Roshan kareghi tera naam chahey (x2)
Bazaar jaaye darbaar jaaye (x2)
Zindaan jaaye beti ali ki
Shaam aa rahi hai dil per hazaro, Sadme uthaye beti Ali ki

6. Sajdey bachaye kabaa bachaey, Quran bachaey deen ko bachaey (x2)
Farshey aza pey ashqey aza ko (x2)
Gohar banaey beti ali ki
Shaam aa rahi hai dil per hazaro, Sadme uthaye beti Ali ki

شام ہائے شام

شام آ رہی ہے دِل پر ہزاروں ، صدمے اٹھائے بیٹی علیؑ کی
ہنستے ہے سارے بازار والے، روتی ہے ہائے بیٹی علیؑ کی

شام آ رہی ہے دِل پر ہزاروں ، صدمے اٹھائے بیٹی علیؑ کی

تھا جس کا بھائی عباسِؑ غازی ، ہے آج قیدی وہ شاھزادی
یہ شور سن کر غیرت كے مارے، کہیں مر نا جائے بیٹی علیؑ کی
شام آ رہی ہے دِل پر ہزاروں ، صدمے اٹھائے بیٹی علیؑ کی

چاروں طرف ہے ماحول ایسا ، جیسے لگا ہو کوئی تماشہ
عباسؑ آجا چادر اڑھا جا، گھبرا نہ جائے بیٹی علیؑ کی
شام آ رہی ہے دِل پر ہزاروں ، صدمے اٹھائے بیٹی علیؑ کی

برسا رہے ہیں پتھر ستم گر، لگتے ہے پتھر بی بیؑ كے سر پر
بازو بندھے ہیں بے بس ہے خود کو، کیسے بچائے بیٹی علیؑ کی
شام آ رہی ہے دِل پر ہزاروں ، صدمے اٹھائے بیٹی علیؑ کی

زلفیں پکڑ کر شمرِ لعیں نے ، مارے طماچے تڑپی سكینہؑ
زینبؑ كے دونوں بازو بندھے ہے، کیسے چھڑائے بیٹی علیؑ کی
شام آ رہی ہے دِل پر ہزاروں ، صدمے اٹھائے بیٹی علیؑ کی

وعدہ کیا تھا اُس نے خدا سے ، روشن کریگی تیرا نام چاہے
بازار جائے دربار جائے، زندان جائے بیٹی علیؑ کی
شام آ رہی ہے دِل پر ہزاروں ، صدمے اٹھائے بیٹی علیؑ کی

سجدے بچائے کعبہ بچائے ، قرآن بچائے دیں کو بچائے
فرشِ عزا پہ اشکِ عزا کو، گوہر بنائے بیٹی علیؑ کی
شام آ رہی ہے دِل پر ہزاروں ، صدمے اٹھائے بیٹی علیؑ کی