Kia Sakina ko bhool payain gay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Jab chalay ran ko shah e Karb o bala
Shor khaimo may tha qayamat ka
Sheh ne beti ko goad may jo liya
Us ne ro kar padar se ye poocha
Baba itna mujhe batayain gay
Kia Sakina ko bhool payain gay

Is qadar aap ka hay khushk gala
Aah bharnay ka hosla na raha
Kis tarha lorian sunayain gay
Kia Sakina ko bhool payain gay

Apnay jazbat kar liye qaboo
Aap ne zabt kar liye ansoo
Zakhm e dil kis tarha chupayain gay
Kia Sakina ko bhool payain gay

Koi baqi nahi raha baba
Aap khud ja ke laye har lasha
Apni khatir kisay bulayain gay
Kia Sakina ko bhool payain gay

Aakhri bar dekh loon chehra
Mujh ko janay hay kyun yaqeen baba
Aap ab loat kar na aayain gay
Kia Sakina ko bhool payain gay

Sheh ne beti ke sar pe hath rakha
Aur darwesh ro ke itna kaha
Tum se pehlay na khuld jayain gay
Kia Sakina ko bhool payain gay

جب چلے رن کو شاہِ کرب و بلا
شور خیموں میں تھا قیامت کا
شہہؑ نے بیٹی کو گود میں جو لیا
اُس نے رو کر پِدر سے یہ پوچھا
بابا اتنا مجھے بتاییں گے
کیا سكینہؑ کو بھول پائیں گے 

اِس قدر آپ کا ہے خشک گلا 
آہ بھرنے کا حوصلہ نہ رہا 
کس طرح لوریاں سنائیں گے 
کیا سكینہؑ کو بھول پائیں گے 

اپنے جذبات کر لئے قابو 
آپ نے ضبط کر لئے آنسو 
زخمِ دل کس طرح چھپائیں گے 
کیا سكینہؑ کو بھول پائیں گے 

کوئی باقی نہیں رہا بابا 
آپ خود جا كے لائے ہر لاشا 
اپنی خاطر کِسے بلائیں گے 
کیا سكینہؑ کو بھول پائیں گے 

آخری بار دیکھ لوں چہرہ 
مجھ کو جانے ہے کیوں یقیں بابا 
آپ اب لوٹ کر نہ آئیں گے 
کیا سكینہؑ کو بھول پائیں گے 

شہہؑ نے بیٹی كے سر پہ ہاتھ رکھا 
اور درویش رو كے اِتنا کہا 
تم سے پہلے نہ خلد جائیں گے 
کیا سكینہؑ کو بھول پائیں گے