Shah kehtay thay na tum ashk bahana Zainab
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

شاہ کہتے تھے نہ تم اشک بہانہ زینبؑ
شکوہءِ رنج کبھی لب پہ نہ لانا زینبؑ

یاد رکھنا مجھے تم شب کی نمازوں میں بہن
کسی لمحے بھی مجھے بھول نہ جانا زینبؑ

بعد میرے جو ستم ڈھائیں ستم گر تم پر
صبر تم فاطمہ زہراؑ کا دکھانا زینبؑ

شام غربت میں لعین خیمے جلائیں جس دم
جلتے خیمے سے بھتیجی کو بچانا زینبؑ

شب میں گر یاد کرے بالی سكینہؑ مجھ کو
میری بچی کو کلیجے سے لگانا زینبؑ

فاتحہ اصغرِؑ بیشیر کا دینا پہلے
شام کی راہوں میں تم پانی جو پانا زینبؑ

راہ کوفہ میں کہا فضہؑ نے رو رو كے سہیل
کیسا آیا ہے یہ غربت کا زمانہ زینبؑ

Shah kehtay thay na tum ashk bahana Zainab
Shikwa-e-ranj kabhi lab pe na lana Zainab

Yad rakhna mujhe tum shab ki namazon may behan
Kisi lamhe bhi mujhe bhool na jana Zainab

Baad meray jo sitam dhayain sitam gar tum par
Sabr tum Fatima Zehra ka dikhana Zainab

Sham-e-ghurbat may laeen khaimay jalayain jis dam
Jaltay khaimay se bhatije ko bachana Zainab

Shab may gar yaad karay bali Sakina mujh ko
Meri bachchi ko kalaijay se lagana Zainab

Fateha Asghar-e-beSheer ka dena pehlay
Shaam ki raahon may tum pani jo pana Zainab

Rah-e-Koofa may kaha Fizza ne ro ro ke Suhail
Kaisa aaya hay yeh ghurbat ka zamana Zainab