Nikla hai janaza koi Allah ke ghar se
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



نکلا ہے جنازہ کوئی اللہ کے گھر سے
افلاک میں اِک شور ہے ماتم کے اثر سے

افسوس کہ مسجد میں نمازی گیا مارا
کچھ کم نہیں یہ حشر قیامت کے اثر سے

زینبؑ سے یہ کہہ دو کہ وہ دل کھول کے روئے
شبیرؑ کی ہمشیر ہے رونے کو نہ ترسے

عباسؑ ذرا زینبِ مضطرؑ سے خبر دار
فریاد سے ہٹ جائے نہ چادر کہیں سر سے

ہاں بھول نہ جانا انہیں کوفے کے مکینوں
گزریں گیں یہ شہزادیاں اِس راہ گزر سے

اصحاب بھی سُن پائے نہ جس بی بی کی آہٹ
سر ننگے وہی گزرے گی اِس راہ گزر سے

Nikla hai janaza koi Allah ke ghar se,
Aflaaq me ek shor hai maatam ke asar se.

1) Afsos Ke masjid me namaazi gaya maara,
Kuch kamm nahi ye hashr qayaamat Ke asar se

2) Zainab se ye keh do ke wo dil khol ke roye
Shabbir ki hamsheer hai roney ko na tarsey

3) Abbas zaraa Zainab e muztar se khabar daar
Faryaad se hat jaayena chaadar kahi sar se

4) Haan bhool na jaana inhay koofey ke makeeno
Guzrengi ye shehzaadiyan is raah guzar se

5) Ashaab bhi sun paaye na jis bibi ki aahat
Sar nangay wohi guzray gi is raah guzar se