Matmi fazayein hain aansuon ka toofan hai
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

ماتمی فضائیں ہیں آنسوئوں کا طوفان ہے

دستک اجل سن کر زندگی ہراساں ہے
ہر طرف اداسی ہے ہر نگاہ ویراں ہے
اور مسجد کوفہ (2) فرطِ غم سے لرزاں ہے
ماتمی فضائیں ہیں آنسوئوں کا طوفاں ہے

آج گر گیا ہو گا پھر غلاف کعبہ سے
بہہ رہا ہے خون پیہم شاہؑ کے عمامے سے
زخمِ فرق حیدرؑ کا (2) اب خدا نگہباں ہے
ماتمی فضائیں ہیں آنسوئوں کا طوفاں ہے

زخم اتنا کاری ہے چل نہ پائو گے مولا
گھر بھی جلد جانا ہے آگئی قلیم آقا
در پہ منتظر زینبؑ (2) مضطر و پریشاں ہے
ماتمی فضائیں ہیں آنسوئوں کا طوفاں ہے

فکرِ کربلا میں گم ہے علیؑ سرِ بستر
غالباََ نگاہوں میں ہے کوئی تہہ خنجر
دیکھ کر سوئے سرورؑ (2) چشم شاہؑ گریاں ہے
ماتمی فضائیں ہیں آنسوئوں کا طوفاں ہے

ؑاے وفا شکن کوفے بے پدر ہوئی زینب
ؑآج گھر کے آنگن میں ننگے سر ہوئی زینب
کل جو ہونے والا ہے (2) آج سے نمایاں ہے
ماتمی فضائیں ہیں آنسوئوں کا طوفاں ہے

عترتِ پیمبرؐ پر سازشوں کے گھیرے ہیں
بجھ گیا چراغ آخر ہر طرف اندھیرے ہیں
چند گام پر شاہد (2) کربلا کا میداں ہیں
ماتمی فضائیں ہیں آنسوئوں کا طوفاں ہے

Matmi fazayein hain aansuon ka toofan hai

dastak-e-ajal sun kar zindagi hirasa hai
har taraf udaasi hai har nigah veraan hai
aur masjid-e-kufa farte gham se larza hai
matami fazayein....

aaj gir gaya hoga phir ghilaaf kaabe se
beh raha hai khoon payham shah ke amamay se
zakhme farq-e-haider ka ab khuda nigehban hai
matami fazayein....

zakhm itna kaari hai chal na paogay maula
ghar bhi jald jaana hai aagayi geleem aaqa
dar pe muntazir zainab muztar-o-pareshan hai
matami fazayein....

fikr-e-karbala may gum hai ali sar-e-bistar
ghaliban nigahon may hai koi tah-e-khanjar
dekh kar suye abbas chashm-e-shah giryaan hai
matami fazayein....

hai girya kuna kufay be-pidar hui zainab
aaj ghar ke aangan may nangay sar hui zainab
kal jo honay wala hai aaj say numayaa hai
matami fazayein....

itrat-e-payambar par saazisho ke ghayray hai
bujh gaya chiraagh aakhir har taraf andheray hai
chandgaam par shahid karbala ka maidan hai
matami fazayein....