Lut gaya Asr ko jab bagh e shahanshah e Arab
Efforts: Syed Razi

Lut gaya asr ko jab baagh-e-Shahinshah-e-Arab
Ek pa ek dashte bayabaa(n) me hua shore ajab
Aag khaimo me lagaye hain adoo haye ghazab
Di sada Baanu-e-Muztar ne ke dauro Zainab

Ghash me hai Aabid-e-beemar jagao Bibi
Jalti hai masnad-e-Sajjad bujhao Bibi


Pyas itni hai ke bistar bhi uthana mushkil
Hai maraz aisa ke karwat bhi badalna mushkil
Dhoop ithni hai ke sehra me teher na mushkil
Zoaf aisa hai ke do gaam bhi chalna mushkil

Sainkdon zakhm liye Aabid-e-dilgeer chala
Haye kis haal me pehene hue zanjeer chala


Al gharaz baap ke laashe pe jo aye Aabid
The khade dayr talak sar ko jhukaye Aabid
Hoke be chain ye Zainab ne kaha ay Aabid
Gham se dam tera kahin toot na jaye Aabid

Marhala sakht hai ab khud ko sambhalo beta
Baap ke laashe se nazron ko hata lo beta


Maqsade haq ke liye ab tujhe jeena hoga
Mushkilon se tujhe har lamha guzarna hoga
Daagh phupion ki aseeri ka uthana hoga
Ujde kumbe ko liye ab tujhe chalna hoga

Har qadam par tere hamrah chalungi pyaare
Saya ban kar mai tere saath chalungi pyaare


Ye suqan sunke bhatije ne phupi ko dekha
Ro ke farmaya phupi jaa(n) ye ghazab hai kaisa
Ran me be goro kafan baap ka laasha hai padha
Shiddathe dard se phat’ta hai kaleja mera

Aasmano se bhi ye baar-e-musibath na uthe
Beta maujud rahe baap ki mayyath na uthe


Phir tane Shah ki taraf dekh ke bole baba
Ye pisar kaise bandhe haathon ko khole baba
Dhoop barsane lagi aag ke gole baba
Hain mere paon me garmi ke phapole baba

Pa ba zanjeer hun kaise tumhe dafnaon mai
Kaash ajaye abhi maut toh marjaon mai


Taaziyane liye ithne me sitam gar aaye
Durre beemar pa be jurm-o-khata barsaye
Nangi oonton pa Nabizaadiyon ko bithlaye
Khauf o dehshat se aseerane bala tharraye

Ithni tezi se adu oonton ko dauraate the
Bachhe girte the jigar maaon ke phat jaate the


Aise aalam me Sakina ne pukara bhaiya
Pushte naaqa pe chhila jata hai seena bhaiya
Dard-o-gham se mera phat’ta hai kaleja bhaiya
Saans lena bhi toh dushwar  hai mera bhaiya

Is musibath se mujhe jald churalo bhaiya
Mar rahi hai ye behen aake bachalo bhaiya

Sunke aawaz-e-Sakina ko jo pahunche Sajjad
Boli bhaiya mujhe baba ki bahut aai hai yaad
Abhi sunne hi na paaye the behen ki faryad
Durre lehrate hue aagaye  shaami jallad

Pusht par aisa kisi shaqs ne koda mara
Dil se ek aah uthi khaak pe beemar gira


Daud kar goad me Aabid ko liya Zainab ne
Dashte shafqath sare aqdas pe rakha Zainab ne
Rayth ko zaqmon se phir saaf kiya Zainab ne
Choom kar baazu e Sajjad kaha Zainab ne

Uth mere laal phupi jaan ho qurba(n) tujh par
Imtehan aur bhi baaqi hain meri jaan tujh par


Ab tujhe sainkdon taklifen uthani hogi
Sar khule bibiyan aage tere chalti hongi
In nazaron se teri aankhen bhi chhalni hongi
Sakhtiyan raahe safar ki tujhe sehni hongi

Din me aaram na raaton ko bhi sona hoga
Dhoop ka odna mitti ka bichona hoga


Aag barsayenge zaalim tere sar par jani
Ashqiya phekenge tujh par abhi patthar jaani
Bibiyan sham me jayenge khule sar jaani
Tujhko rehna hai abhi qaid ke andar jani

Khaatema tujh pa hare ek zulm ka hoga beta
Tu hai sabir ka pisar sabr dikhana hoga


Aakherash aye Madine me Shahinshahe anaam
Ay Mujeeb ham ne kiya Shah se ek din ye kalam
Sadma kab sabse zyada tumhe pahuncha hai Imam
Roke farmate the Sajjad ke al-Shaam al-Shaam

Saaneha Sham ke baazar ka bhoolun kaise
Waaqiya qasre sitamgar ka sunaon kaise.

لٹ گیا عصر کو جب باغ شہنشاہ عرب
اک بہ اک دشت بیاباں میں ہوا شور عجب
آگ خیموں میں لگاتے ہیں عدو ہاے غضب
دی صدا بانوئے مضطر نے کہ دوڑو زینب

غش میں ہے عابد بیمار جگاؤ بی بی
جلتی ہے مسند سجاد بجھاؤ بی بی

پیاس اتنی ہے کہ بستر سے بھی اٹھنا مشکل
ہے مرض ایسا کہ کروٹ بھی بدلنا مشکل
دھوپ اتنی ہے کہ صحرا میں ٹھرنا مشکل
ضعف ایسا ہے کہ دوگام بھی چلنا مشکل

سینکڑوں زخم لئے عابدِؑ دلگیر چلا
ہاے کس حال میں پہنے ہوئے زنجیر چلا

چین عابدؑ کو میسر نہیں دم بھر کے لئے
ان گنت رنج و الم اک دل مضطر کے لئے
آے ہیں آہنی زیور میرے دلبر کے لئے
موت سے کم تو یہ منظر نہیں مادر کے لئے

ؑدھوپ شدّت کی ہے قیدی کو بچالو زینب
ؑمیرے بیمار کو آنچل میں چھپالو زینب

ؑالغرض باپ کے لاشے پہ جو آئے عابد
ؑتھے کھڑے دیر تلک سر کو جھکائے عابد
ؑہو کے بے چین یہ زینبؑ نے کہا اے عابد
ؑغم سے دم تیرا کہیں ٹوٹ نہ جاۓ عابد

مرحلہ سخت ہے اب خود کو سنبھالو بیٹا
باپ کے لاشے سے نظروں کو ہٹالو بیٹا

مقصد حق کے لئے اب تجھے جینا ہوگا
مشکلوں سے تجھے ہر لمحہ گزرنا ہوگا
داغ پھپیوں کی اسیری کا اٹھانا ہوگا
اجڑے کنبے کو لئے اب تجھے چلنا ہوگا

ہر قدم پر تیرے ہمراہ چلونگی پیارے
سایہ بن کر میں تیرے ساتھ رہونگی پیارے

یہ سخن سنکے بھتیجے نے پھوپی کو دیکھا
روکے فرمایا پھوپی جاں یہ غضب ہے کیسا
رن میں بے گورو کفن باپ کا لاشہ ہے پڑا
شدتِ درد سے پھٹتا ہے کلیجہ میرا

آسمانوں سے بھی یہ بار مصیبت نہ اٹھے
بیٹا موجود رہے باپ کی میت نہ اٹھے

پھر تنِ شہ کی طرف دیکھ کے بولے بابا
یہ پسر کیسے بندھے ہاتھوں کو کھولے بابا
دھوپ برسانے لگی آگ کے گولے بابا
ہیں میرے پاؤں میں گرمی سے پھپولے بابا

پابہ زنجیر ہوں کیسے تمہیں  دفناؤں میں
کاش آجاۓ ابھی موت تو مرجاؤں میں

دھوپ تنہائی غریب الوطنی بے پدری
ہاے بیماری میری ہاے میری بے پدری
یہ اسیری یہ جفا تشنہ لبی بے پدری
دشت غربت میں یتیمی کو ملی بے پدری

اک دل تشنہ دہن اور ہزاروں نشتر
بابا اس حال میں کس طرح سے طے ہوگا سفر

تازیانے لئے اتنے میں ستمگر آے
درے بیمار پہ بے جرم و خطا برساۓ
ننگی اونٹوں پہ نبی زادیوں کو بٹھلاۓ
خوف و دہشت سے اسیران بلا تھراۓ

اتنی تیزی سے عدو اونٹوں کو دوڑا تے تھے
بچے گرتے تھے جگر ماؤں کے پھٹ جاتے تھے

ایسے عالم میں سکینہ نے پکارا بھیا
پشت ناقہ پہ چھلا جاتا ہے سینہ بھیا
درد و غم سے میرا پھٹتاہے کلیجہ بھیا
سانس لینا بھی تو دشوار ہے میرا بھیا

اس مصیبت سے مجھے جلد چھڑالو بھائی
مر رہی ہے یہ بہیں آکے بچالو بھائی

سنکے آواز سکینہ کو جو پہنچے سجاد
بولی بھیا مجھے بابا کی بہت آتی ہے یاد
ابھی سننے ہی نہ پاۓ تھے بہیں کی فریاد
درے لہراتے ہوئے اگۓ شامی جلاد

پشت پر ایسا کسی شخص نے کوڑا مارا
دل سے اک آہ اٹھی خاک پہ بیمار گرا

دوڑ کر گود میں عابد کو لیا زینب نے
دشت شفقت سر اقدس پہ رکھا زینب نے
ریت کو زخموں سے پھر صاف کیا زینب نے
چوم کر بازوے سجاد کہا زینب نے

اٹھ میرے لال پھوپی جان ہو قرباں تجھ پر
امتحاں اور بھی باقی ہیں میری جاں تجھ پر

اب تجھے سینکڑوں تکلیفیں اٹھانی ہونگی
سر کھلے بی بیان آگے تیرے چلتی ہونگی
ان نظاروں سے تیری آنکھیں بھی چھلنی ہونگی
سختیاں راہ سفر کی تجھے سہنی ہونگی

دن میں آرام نہ راتوں کو بھی سونا ہوگا
دھوپ کا اوڑنا مٹی کا بچھونا ہوگا

آگ برساینگے ظالم تیرے سر پر جانی
اشقیا پھیکینگے تجھ پر ابھی پتّھر جانی
بی بیاں شام میں جاینگے کھلے سر جانی
تجھکو رہنا ہے ابھی قید کے اندر جانی

خاتمہ  تجھ پہ ہر اک ظلم کا ہوگا بیٹا
تو ہے صابر کا پسر صبر دکھانا بیٹا

آخرش آے مدینے میں شہنشاہ انام
اے مجیب ہم نے کیا شاہ سے اک دن یہ کلام
صدمہ کب سب سے زیادہ تمہیں پہنچا ہے امام
رو کے فرماتے تھے سجاد کہ آشام آشام

سانحہ شام کے بازار کا بھولوں کیسے
واقہ قصرے ستمگر کا سناؤں کیسے