Jo khaar gul ke yameen-o-yasar rehta hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Jo khaar gul ke yameen o yasar rehta hay
Qareeb jitna bhi rehta ho khaar rehta hay

Jo tap ke aaye ghadeer aur jang e khaibar se
Unhi ko bughz e Ali ka bukhar rehta hay

Najaf may khuld may kaabay may qalb-e-momin may
Kahan kahan mera parwardigar rehta hay

Na haadsaat e zaman na fikr barzakh o hashr
Ke gird naad-e-Ali ka hisaar rehta hay

Agar cheh hajj bhi karay aur namaz o roza bhi
Adoey aal e nabi beshumar rehta hay

جو خار گل کے یمین و یسار رہتا ہے
قریب جتنا بھی رہتا ہو خار رہتا ہے

جو تپ کے آئے غدیر اور جنگِ خیبر سے
انہیں کو بغضِ علیؑ کا بخار رہتا ہے

نجف میں خلد میں کعبے ہیں قلبِ مومن میں
کہاں کہاں میرا پروردگار رہتا ہے

نہ حادثاتِ زمن نہ فکرِ برزخ و حشر
کہ گرد نادِ علیؑ کا حصار رہتا ہے

اگرچہ حج بھی کرے اور نماز و روزہ بھی
عدوئے آلِ نبیؐ بے شمار رہتا ہے