Awaaz to day Akbar, haey Awaaz to day Akbar
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Karwal jawan ki laash par, kehta raha, ro kar pidar
Awaaz to day Akbar, haey Awaaz to day Akbar
 
Girta howa uthta howa, aa tu gaya hun mein magar, ghum hogaya noor-e-nazar.
 
1) Tu nojawan hai Akbar, aur hai zaeef hay baba
   Kaisay uthaoon mayyat, mujko tu bata de itna
   Jaana hai ab khayyam tak, kaisay karun main ye safar
   Kham hogayee meri qamar
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)
 
2) Aayi Sadaa Jidhar Se, Mai us Taraf Barhunga
   Aayi Sadaa Jidhar Se
   Awaaz Sunte Sunte, Tujhe Ran Mai Dhundh hi lunga
   Tu Hai Jidhar Pyaare Mere, Dheere Se Yeh Kehte Huwe
   Baba Idhar, Baba Idhar
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)

3) Sughra Ke Naamwar ko, khat ka jawaab kya doon
   Sughra Ke Naamwar ko
   Jo Muntazir Hai Usko, Barchhi Ka Haal Sunadun
   Raste Se Ab Nazren Hata, Maara Gaya Bhaai Tera
   Kya Bhejdun Usko Khabar haaye
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)

4) Teri Sadaa Ko Sunkar, Woh Phir Se Jee Uthegi
   Teri Sadaa Ko Sunkar
   Hamshir Teri Warna, Shaayad Nahin Jee paayegi
   Seenay Ki Barchhi Thaamke, Sughra Ko Uske Naam Se
   Ek baar himmat Jorr Kar
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)

5) Barchhi Se Bas Kalejaa, Tera Nahi Chhidaa Hai
   Barchhi Se Bas Kalejaa
   Maqtal Mai Fatema Ne, Dil apnaa Thaam Liya Hai
   Bhaai Hassan Nana Nabi, Baba Ali Daadi Teri
   Mawjud Hai Sab Hi Idhar
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)

6) Kaise Bayaan Karun Mai, Woh Dardnaak Manzar
   Kaise Bayaan Karun Mai
   Sakhte Mai Thi Khudaai, Rota Tha Saara Lashkar
   Jab Fatema Ke Laal ne, Haathon Pe Lekar Khaak Se
   Rakh Kar Kahaan Zaanun Pe Sar
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)

7) Laashe Ke Dono Jaanib, Baithi Hai Maaen Dono
   Laashe Ke Dono Jaanib
   Seenay Pe Bosen Dekar, Leti Hai Malaaen Dono
   Zainab Idhar Laila Idhar, Chume Tera Zakhmi Jigar
   Inse Toh Koi Baat Kar
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)

8) Teri Sadaa Ko Sunkar, Woh Phir Se Jee Uthegi
   Teri Sadaa Ko Sunkar
   Hamshir Teri Warna, Shaayad Nahin Jee paayegi
   Sine Ki Barchhi Thaamke, Sughra Ko Uske Naam Se
   Ek baar himmat Jor kar
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)

9) Takra rahi hain har su khaimein mein Umm-e-Laila
   Usko pata chala jab aya hai tera lasha
   Teri maut ki sunkar khabar, girta nahi khaime ka dar
   Aisa huwa uspar asar
   Awaaz To Day Akbar, haaye (x3)

10) Akbar Janaabe Akbar, Khaamosh Ho Gaye Thay
    Akbar Janaabe Akbar
    Shabbir Sar Jhukaaye, Laashe Ke Paas Khade The
    Zainab Kabhi Laila Kabhi, Behnne Kabhi Kabhi Naamwar
    Kehta Rahaa Yeh Saara Ghar
    Awaaz To Day Akbar, haaye (x5)

کڑیل جواں کی لاش پر کہتا رہا رو کر پدر
آواز تو دے اکبر ۔۔۔۔
گرتا ہوا اُٹھتا ہوا ٓتو گیا ہوں میں مگر
گُم ہوگیا نورِنظر
آواز۔۔۔

تُو نوجواں ہے اکبر اور ضعیف بابا
کیسے اُٹھائوںمیت مجھ کو تُو بتا دے اتنا
جانا ہے اب خیام تک کیسے کروں میں یہ سفر
خم ہوگئی میری کمر
آواز۔۔۔

آئی صدا جدھر سے میں اُس طرف بڑھوںگا
آواز سنتے سنتے تجھے اُن میںڈھونڈ ہی لوںگا
تُو ہے جدھر پیارے میرے دِھرے سے یہ کہتے ہوئے
بابا اِدھر بابااِدھر
آواز۔۔۔

صغرا کے نامہ ور کو خط کا جواب کیا دوں
وہ منتظر ہے اُس کو برچھی کا حال سُنادوں
رستہ سے اب نظریں ہٹا مارا گیا بھائی تیرا
کیا بھیج دوں اُس کو خبر
آواز۔۔۔

تیری صدا کو سن کر وہ پھر سے جی اُٹھے گی
ہمشیر تیری ورنہ شاید نہیں جی پائے گی
سینے کی برچھی تھام کہ صغرا کو اُس کے نام سے
اک بار ہمت جوڑ کر
آواز۔۔۔

برچھی سے بس کلیجہ تیرا نہیں چھدا ہے
مقتل میں فاطمہ نے دل اپنا تھام لیا ہے
بھائی حسن نانا نبی باباعلی دادی تیری
موجود ہیں سب ہی ادھر
آواز۔۔۔

کیسے بیاں کروں میں وہ درد ناک منظر
سکتے میںتھے خدائی روتا تھا سارا لشکر
جب فاطمہ کے لال نے ہاتھوں پہ لیکر خاک سے
رکھ کر کہا زانوں سر
آواز۔۔۔

لاشے کے دونو جانب بیٹھیں ہیں مائیں دونوں
سینے پہ بوسے دیکر لیتی ہیں بلائیں دونوں
زینب اِدھر لیلہ اُدھر چومیں تیرا زخمی جگر
اِن سے تو کوئی بات کر
آواز۔۔۔

اکبر جنابِ اکبر خاموش ہوگئے تھے
شبیر سر جھکائے لاشے کے پاس کھڑے تھے
زینب کبھی لیلہ کبھی بہنیںکبھی کبھی نامہ ور
کہتا رہا یہ سارا گھر
آواز۔