Gham-e-Shabbir Mein Ankho Se Jo Ansu Bahate Hain
Efforts: Mojiz Abbas Zaidi (Roorkee)

Gham-e-Shabbir Mein Ankho Se Jo Ansu Bahate Hain
Zahe Qismat Wo Hi Jannat Me Ghar Apna Banate Hain

Lahed Me Jab Farishto Ne Mujhe Dekha To Yun Bole
Teri Imdad Ko Mushkil Kusha Tashreef Late Hain

Kamar Tuti Huyi Hai Shaha Ki Abbas Ke Gham Me
Ye Himmat Hai Jawan Farzand Ki Mayyat Uthate Hain

Kaha Rokar Ye Zainab Ne Madad Ko Aeye Baba
Sitamgar Abid-e-Bimar Ko Bedi Pehnate Hain

Zara Dekhe to Koi Hosla iss Ghar Ke Bachcho Ka
Ali Asghar Gale Par Teer Kha Ke Muskurate Hain.

غم شبیرؑ میں آنکھوں سے جو آنسو بہاتے ہیں 
زھے قسمت وہ ہی جنت میں گھر اپنا بناتے ہیں 

لحد میں جب فرشتوں نے مجھے دیکھا تو یوں بولے 
تیری امداد کو مشکل كشاءؑ تشریف لاتے ہیں 

کمر ٹوٹی ہوئی ہے شاہؑ کی عباسؑ كے غم میں 
یہ ہمت ہے جوان فرزند کی میّت اٹھاتے ہیں 

کہا روکر یہ زینبؑ نے مدد کو آئیے بابا 
ستم گر عابد بیمارؑ کو بیڑی پہناتے ہیں 

ذرا دیکھے تو کوئی حوصلہ اِس گھر كے بچوں کا 
علی اصغرؑ گلے پر تیر کھا كے مسکراتے ہیں