Jaltey huay khaimo se Zainab ki sadaa aayi
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Jaltey huwey khaimo se Zainab ki sadaa aayi 
Abbas kaha ho tum
Naa sarr pey rahii chaadar naa mera bachaa Bhaii 
Abbas kaha ho tum
Jaltey huwey.....

1) Abbas chaley aao qaimo mey gareebo ke
Bhookey air pyaasey hai lootey hai naseebo ke
Sajjad ko hosh nahii kulsoom hai ghabraayii Abbas kaha ho tum
Jaltey huwey.....

2) Shabbir khadaa rann mey kayi roz ka pyaasa hai
Teero se huwa chalnii mazloom ka laasha hai
Naa kafan milaa isko naa qabr hi banpaayii Abbas kaha ho tum
Jaltey huwey.....

3) haye shimr kameeney ney Maasoom sakina ke 
Maarey hai tamaachey bhi haye phool si gaalo pey
Aajao chachaa gaazi ro rokey wo chillaaayii Abbas kaha ho tum
Jaltey huwey.....

4) jaltii huwi reytii par mazloom ki laash padii 
Rotii hai sakina bhi baba ke paas khadii
Hai haal yateemaana gurbat ki ghataa chaayii Abbas kaha ho tum
Jaltey huwey.....

5) kulsoom ney sarr peetaa maqtal mey khadey hokar
Aur kaanpti haatho se zainab ney ro rokar
Dastaar imaamat ko Sajjad ko pehnaayii Abbas kaha ho tum
Jaltey huwey.....

جلتے ہوئے خیموں سے زینبؑ کی صدا آئی 
عباسؑ کہاں ہو تم 
نہ سر پہ رہی چادر نہ میرا بچا بھائی 
عباسؑ کہاں ہو تم 
جلتے ہوئے . . . . . 

عباسؑ چلے آؤ خیموں میں غریبوں كے 
بھوکے اور پیاسے ہیں لوٹے ہے نصیبوں كے 
سجادؑ کو ہوش نہیں كلثومؑ ہے گھبرائی
عباسؑ کہاں ہو تم 
جلتے ہوئے . . . . . 

شبیرؑ کھڑا رن میں کئی روز کا پیاسا ہے 
تییروں سے ہُوا چھلنی مظلوم کا لاشہ ہے 
نہ کفن ملا اُسکو نہ قبر ہی بن پائی
عباسؑ کہاں ہو تم 
جلتے ہوئے . . . . . 

ہائے شمر کمینے نے معصوم سكینہؑ كے 
مارے ہیں تمانچے بھی ہائے پھول سے گالوں پہ 
آجاؤ چچا غازیؑ رو روکے وہ چلائی
عباسؑ کہاں ہو تم 
جلتے ہوئے . . . . . 

جلتی ہوئی ریتی پر مظلوم کی لاش پڑی 
روتی ہے سكینہؑ بھی بابا كے پاس کھڑی 
ہے حال یتیمانہ غربت کی گھٹا چھائی
عباسؑ کہاں ہو تم 
جلتے ہوئے . . . . . 

كلثومؑ نے سر پییتا مقتل میں کھڑے ہوکر 
اور کانپتے ہاتھوں سے زینبؑ نے رو رو کر 
دستار امامت کی سجادؑ کو پہنائی
عباسؑ کہاں ہو تم 
جلتے ہوئے . . . . .