Bayad e Sibt e Nabi jo bahaye jatay hain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Bayad e Sibt e Nabi jo bahaye jatay hain
Un ansoowon se muqaddar sajaye banaye jatay hain

Yaqeen na ho to waheen Karbala may chal kar dekh
Kis ihetemam se jangal basaye jatay hain

Ye naam e Shah e do aalam kahi karam hay ke ham
Gham e jahan se daman bachaye jatay hain

Udoowe aal ko zid hay ke zikr e aal na ho
kaheen ye naam bhi dil se bhulaye jatay hain

Hay hota jin ko ata hukm e Hazrat e Ghazi
Wohi to roza e Sheh par bulaye jatay hain

Kami Hussain ki baqi hay Kazmi warna
Yazeed aaj bhi dunya may paye jatay hain

بیادِ سبطِ نبی جو بہائے جاتے ہیں
اُن آنسوؤں سے مقدّر بنائے جاتے ہیں

یقیں نہ ہو تو وہیں کربلا میں چل کر دیکھ
کس اہتمام سے جنگل بسائے جاتے ہیں

یہ نامِ شاہِ دو عالم کا ہی کرم ہے کہ ہم
غمِ جہان سے دامن بچائے جاتے ہیں

عدوئے آل کو ضد ہے کہ ذکرِ آل نہ ہو
کبھی یہ نام بھی دل سے بھلائے جاتے ہیں

ہے ہوتا جن کو عطا حکمِ حضرتِ غازی
وہی تو روزہِ شہہ پر بلائے جاتے ہیں

کمی حسینؑ کی باقی ہے کاظمی ورنہ
یزید آج بھی دنیا میں پائے جاتے ہیں