Akbar , mera sehrayan wala Akbar
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Akbar mera sehrayan wala Akbar
  
Zakhm dil kay dikhaoon main kaisay (x2) 
tera laasha uthaoon main kaisay
  
1) Laashay Akbar pe Shah jab ponchay 
dil ko haathon se thaam kar bolay
Teri furqat may ay Ali Akbar 
aag dil main meray lagadi hai
Aag dil ki bujaoon main kaisay (x2) 
tera laasha utaoon main kaisay
  
2) Tu hai kariyal jawaan ay beta 
baap tera zaeef hai kitna
Noor ankhon ka hogaya rukhsat 
mujh ko aata nahin nazar khaima
Laikay khaimon mai jaoon mai kaisay (x2) 
tera laasha utaoon main kaisay
  
3) Jis neh athara saal pala tha 
kaisay dekhegi woh tera laasha
Teri shaadi ka tha jisay armaan 
kaisay jhelay gi vo tera sadma
Teri maa ko bataoon main kaisay (x2) 
tera laasha utaoon main kaisay
  
4) Dekh aya hai qasid-e-Sughra 
raah takti hai woh dukhi behna
Tujh ko bemaar ney bulaya hai 
wada Sughra ka kyon bhula dala
Ghum ye dil seh lagaoon mai kaisay (x2) 
tera laasha utaoon main kaisay
  
5) Bhayi bheno ka hai ajab rishta 
jiska saani kahin nahin milta
Khat ye Sughra ney hay likha Akbar 
aik dukhiya ki laaj rakh layna
Mar gaya tu bataoon main kaisay (x2) 
tera laasha utaoon main kaisay
  
6) Lutf jeenay mai ab kahan Akbar 
dil seh uthti hai yeh fughan Akbar
Sub-e-Ashur di thi jo tu nay 
khoon rulai gi wo azaan Akbar
Teri suraat bhulaoon mai kaisay (x2) 
tera laasha utawo main kaisay
 
7) Zabt ghum kah woh haal hai beta dekhu kaisay yeh zakaam seenay ka
   May toh pardes mai akela hun dekh kar zakham kya karo batala
   Is peh marhum lagaoon mai kaisay (x2) tera laasha utawo main kaisay
  
8) Aysi gurbaat peh moou nahin morro mai hun tanha mujhe na youn choro
   Kya guzarti hai baap kay dil par ghum zada dil ko youn nahi toro
   Apni gurbaat bataoon mai kaisay (x2) tera laasha utaoon main kaisay

میرا سہریاں والا اکبرؑ، میرا سہریاں والا اکبرؑ
زخم دل کے دکھاؤں میں کیسے، تیرا لاشہ اٹھاؤں میں کیسے
اکبرؑ، میرا سہریاں والا اکبرؑ

لاشِ اکبرؑ پہ شاہ جب پہنچے ، دل کو ہاتھوں سے تھام کر بولے
تیری فرقت نے اے علی اکبرؑ ، آگ دل میں میرے لگا دی ہے
آگ دل کی بجھاؤں میں کیسے ، تیرا لاشہ اُٹھاؤں میں کیسے

تو ہے کڑیل جوان اے بیٹا ، باپ تیرا ضعیف ہے کتنا
نور آنکھوں کا ہوگیا رخصت ، مجھکو آتا نہیں نظر خیمہ
لیکے خیموں میں جاؤں میں کیسے ، تیرا لاشہ اُٹھاؤں میں کیسے

جس نے اٹھارہ سال پالا تھا ، کیسے دیکھے گی وہ تیرا لاشہ
تیری شادی کا تھا جسے ارماں ، کیسے جَھیلے گی وہ تیرا صدمہ
تیری ماں کو بتاؤں میں کیسے ، تیرا لاشہ اُٹھاؤں میں کیسے

دیکھ آیا ہے قاصدِ صغراؑ ، راہ تکتی ہے وہ دکھی بہنا
تجھ کو بیمار نے بلایا ہے ، وعدہ صغراؑ کا کیوں بھلا ڈالا
غم یہ دل سے لگاؤں میں کیسے ، تیرا لاشہ اُٹھاؤں میں کیسے

بھائی بہنوں کا ہے عجب رشتہ ، جس کا ثانی کہیں نہیں مِلتا
خط یہ صغراؑ نے ہے لکھا اکبرؑ ، ایک دکھیا کی لاج رکھ لینا
مر گیا تُو بتاؤں میں کیسے ، تیرا لاشہ اُٹھاؤں میں کیسے

لطف جینے میں اب کہاں اکبرؑ ، دل سے اُٹھتی ہے یہ فُغاں اکبرؑ
صبحِ عاشور دی تھی جو تو نے ، خوں رلائے گی وہ اذاں اکبرؑ
تیری صورت بُھلاؤں میں کیسے ، تیرا لاشہ  اُٹھاؤں میں کیسے

ضبطِ غم کا وہ حال ہے بیٹا ، دیکھوں کیسے یہ زخم سینے کا
میں تو پردیس میں اکیلا ہوں ، دیکھ کر زخم کیا کروں بتلا
اِس پہ مرحم لگاؤں میں کیسے ، تیرا لاشہ اٹھاؤں میں کیسے

ایسی غربت میں مُںہ نہیں موڑو ، میں ہوں تنہا مجھے نہ یوں چھوڑو
کیا گزرتی ہے باپ کے دل پر ، غمزدہ دل کو یوں نہیں توڑو
اپنی غربت بتاؤں میں کیسے ، تیرا لاشہ اُٹھاؤں میں کیسے