Darya e lahoo may deen ke liye
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Darya e lahoo may deen ke liye 
Ahmed ka nawasa doob gaya
Deen apna bachanay ki khaatir
Islam ka taara doob gaya

Noshah ka lasha khaimay may
Kis tarha se Sarwar le aaye
Maa jis ki balayain leti thi
Wo khoon may chehra doob gaya

Hamshakl Nabi marnay ko chala
Maa sar ko jhukaye roti rahi
Chehray ki udasi keh uthi
Qismat ka sitara doob gaya

Abbas jo le ke mashkeeza
Khaimay se chalay darya ki taraf
Yun moj e barrheen muztar ho kar
Pani may kanara doob gaya

Jab teer lagaya zalim ne
Ihsas ki dunyi kaamp uthi
Yun nanhay galay se khoon baha
Besheer ka kurta doob gaya

Asghar ke galay par teer laga
Konain may chaya sannata
Besheer lahoo may kiya dooba
Quran ka para doob gaya

دریائے لہو میں دیں كے لیے 
احمدؐ کا نواسہ ڈوب گیا 
دین اپنا بچانے کی خاطر 
اسلام کا تارا ڈوب گیا 

نوشاہ کا لاشہ خیمے میں
کس طرح سے سرورؑ لے آئے 
ماں جس کی بلائیں لیتی تھی 
وہ خون میں چہرہ ڈوب گیا 

ہمشکلِ نبیؑ مرنے کو چلا 
ماں سَر کو جھکائے روتی رہی 
چہرے کی اُداسی کہہ اٹھی 
قسمت کا ستارہ ڈوب گیا 

عباسؑ جو لے كے مشکیزہ 
خیمے سے چلے دریا کی طرف 
یوں موج بڑھیں مضطر ہو کر 
پانی میں کنارہ ڈوب گیا 

جب تیر لگایا ظالم نے 
احساس کی دنیا کانپ اٹھی 
یوں ننھے گلے سے خون بہا 
بیشیر کا کرتا ڈوب گیا 

اصغرؑ كے گلے پر تیر لگا 
کونین میں چھایا سناٹا 
بیشیر لہو میں کیا ڈوبا 
قرآن کا پارہ ڈوب گیا