Ameer Hussain Ghareeb Hussain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Ameer Hussain
Ghareeb Hussain
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay (x2)

Hussain mehboob e kibriya hay
Hussain ghurbat ki inteha hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay

Hussain maqsood e karbala hay (x2)
Hussain mazloom e karbala hay

Ameer bhi hay ghareeb bhi hay (x2)
Hussain mehboob e gibriya hay
Hussain ghurbat ki inteha hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay

1. Ameer aisa kafan ki soghat jis keh rozey se bat rahe hay (x2)
Ghareeb aisa keh khud ko ab tak kafan mayesar nahi huwa hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay
Hussain Ghareeb Hussain

2. Ameer aisa keh jis ka jhula Nabi jhoolayein Ali jhoolayein (x2)
Ghareeb aisa keh jis keh bachey ka ban mei jhula bhi jal gaya hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay
Hussain Ghareeb Hussain

3. Ameer aisa keh rasm-e-parda dari chali hay ussi keh ghar se (x2)
Ghareeb aisa keh sham o kufa mei us ki hamsheer berida hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay
Hussain Ghareeb Hussain

4. Ameer aisa Sakina jaisi khuda neh beti jisey ata ki (x2)
Ghareeb aisa ussi keh moo par koi tamachey laga raha hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay
Hussain Ghareeb Hussain

5. Ameer aisa keh jis ki baba ki milkiyyat mei hay hawze kausar (x2)
Ghareeb aisa keh teen din se ussi ko pani nahi mila hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay
Hussain Ghareeb Hussain

6. Ameer aisa ke jiska beta, shabih-e-sardaar-e-ambhiya hay (x2)
Ghareeb aisa ke wohi seene mei barchi khaaye tarap raha hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay
Hussain Ghareeb Hussain

7. Ameer aisa khuda ka deen jis keh dam se hay aj tak salamat (x2)
Ghareeb aisa keh ran mei jis ka badan salamat nahi raha hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay
Hussain Ghareeb Hussain

8. Ameer aisa keh patharo ko bana deh gohar wohi “takallum” (x2)
Ghareeb aisa keh patharo mei ussi ka lasha chupa huwa hay

Ameer bhi hay ghareeb bhi hay (x2)
Hussain mehboob e gibriya hay
Hussain ghurbat ki inteha hay
Ameer bhi hay ghareeb bhi hay
Ameer Hussain
Ghareeb Hussain

امیر حسینؑ غریب حسینؑ

امیر بھی ہے غریب بھی ہے
امیر بھی ہے غریب بھی ہے

حسینؑ محبوب کبریا ہے
حسینؑ غربت کی انتہا ہے

حسینؑ مقصود کربلا ہے
حسینؑ مظلوم کربلا ہے

امیر ایسا کفن کی سوغات جس کے روضہ سے بٹ رہی ہے
غریب ایسا کہ خود کو اب تک کفن میسر نہیں ہوا ہے

امیر ایسا کہ جس کا جھولا نبیۖ جھلائيں علی جھلائيں
غریب ایسا کہ جس کے بچے کا جھولا بن میں جل گيا ہے

امیر ایسا کہ رسم پردہ دری چلی ہے اسی کے گھر سے
غریب ایسا کہ شام و کوفہ میں اس کی ہمشیر بے ردا ہے

امیر ایسا سکینہ جیسی خدا نے بیٹی جسے عطا کی
غریب ایسا اسی کے منہ پر کوئ طمانچے لگا رہا ہے

امیر ایسا کہ جس کے بابا کی ملکیت میں ہے حوض کوثر
غریب ایسا کہ تین دن سے اسی کو پانی نہیں ملا ہے

امیر ایسا کہ جس کا بیٹا شبیہ سردار انبیاء ہے
غریب ایسا کہ وہ ہی سینے پر برچھی کھاۓ تڑپ رہا ہے

امیر ایسا خدا کا دیں جس کے دم سے ہے آج تک سلامت
غریب ایسا کہ رن میں جس کا بدن سلامت نہیں رہا ہے

امیر ایسا کہ پتھروں کو بنا دے گوہر وہی تکلم
غریب ایسا کہ پتھروں میں اسی کا لاشہ چھپا ہوا ہے

امیر بھی ہے غریب بھی ہے
امیر بھی ہے غریب بھی ہے

امیر حسینؑ غریب حسینؑ