Sajjad ro ke bolay aey meray laal Baqar
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



سجّادؑ رو كے بولے 
اے میرے لال باقرؑ 
کر صبر میرے بیٹا 
خود کو سنبھال باقرؑ 
اے میرے لال باقرؑ 

مت پیٹ سینہ و سَر 
مت کر تو ایسے نوحہ 
تر خون میں ہوں لیکن 
زندہ ابھی ہوں بیٹا 
خاکِ سفر کو سَر پر 
ایسے نہ ڈال باقرؑ 

طوقِ گراں سے تیری 
گردن بندھی ہوئی ہے 
یہ وزن ہے كے جس سے 
خم پشت ہو گئی ہے 
ظالم سے رحم کا تو 
مت کر سوال باقرؑ 

دین کی بقا کی خاطر 
تو نے ستم اٹھائے
تو وہ امام جس نے 
طفلی میں غم اٹھائے 
دنیا نہ لا سکے گی 
تیری مثال باقرؑ 

ہر گام امتحاں ہیں 
اور شام کا سفر ہے 
بے پردہ بیبیاں ہیں 
اور شام کا سفر ہے 
تجھ کو رلا رہا ہے 
بس یہ خیال باقرؑ 

سیدانیوں کو ظالم 
درّے لگا رہا ہے
اُن کا خیال مجھ کو 
ہر دم رلا رہا ہے 
گر ہو سکے تو اُن کی 
مشکل کو ٹال باقرؑ 

زد پر ہے رنج و غم كے 
میری بہن سكینہؑ
رخسار پر طمانچے
سہتی ہے وہ ہزینہ 
جا کر میری بہن کو 
غم سے نکال باقرؑ 

کرب و بلا كے بن میں
غم تُو نے جو سہے ہیں 
صدمے جو تیرے دِل پر 
بازار میں لگے ہیں 
ہو گا نہ ان غموں کا 
اب اندمال باقرؑ 

اے نور زخم اپنے 
اشکوں سے دھو كے عابدؑ
اے نور کہہ رہے تھے 
باقرؑ سے رو كے عابدؑ
سہہ لے سفر كے سارے 
رنج و ملال باقرؑ 

Sajjad ro ke bolay
Aey meray laal Baqar
Kar sabr meray beta
Khud to sambhal Baqar
Aey meray laal Baqar

Mat peet seena o sar
Mat kar tu aisay Noha
Tar khoon may hoon laikin
Zinda abhi hoon beta
Khak e safar ko sar par
Aisay na daal Baqar

Toq e garan se teri
Gardan bandhi hui hay
Ye wazn hay ke jis se
Kham pusht ho gayi hay
Zalim se rehm ka tu
Mat kar sawal Baqar

Deen ki baqa ki khatir
Tu ne tamachay khaey
Tu wo Imam jis ne
Tifli may gham uthaey
Dunya na la sakay gi
Teri misal Baqar

Har gaam imtihaan hain
Aur Shaam ka safar hay
Be parda bibiyan hain
Aur Shaam ka safar hay
Tujh ko rula raha hay
Bas ye khayal Baqar

Saidaniyon ko zalim
Durray laga raha hay
Un ka khayal mujh ko
Har dam rula raha hay
Gar ho sakay to un ki
Mushkil ko taal Baqar

Zad par hay ranj o gham ke
Meri bahan Sakina
Rukhsar par tamachay
Sehti hay wo hazeena
Ja kar meri bahan ko
Gham se nikal Baqar

Karb o bala ke ban may
Gham tu ne jo sahay hain
Sadmay jo teray dil par
Bazar may lagay hain
Ho ga na in ghamon ka
Ab indimal Baqar

Aey Noor zakhm apnay
Ashkon se dho ke Abid
Aey Noor keh rahay thay
Baqar se ro ke Abid
Seh le safar ke saray
Ranj o malal Baqar