Ibne Muljim pe lanat Khuda ki
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Zakhmi peshani hay Murtaza ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Asman par udasi hay chayi
Gham may doobi hui hay Khudayi
Shair e dawar pe jis ne jafai ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Khuld may Fatima ro rahi hay
Jan Ummul Baneen kho rahi hay
Muztarib hay safeen ambiya ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Kyun na hooran e jannat ho giryan
Zainab e ghamzada hay pareshan
Hay jabeen khoon khairul wara ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Kaise Fizza jigar ko sambhalay
Bibi Kulsoom karti hay nalay
Lash uthti hay shah e huda ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Hashr aalam may hay aaj barpa
Ro ke Jibreel kartay hain Noha
Haey haey Ali ne qaza ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Ambiya kartay hain haey haey
Kaise Hasnain ko chain aaye
Ghair halat hay aal e aba ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Sar pataktay hain Abbas Ghazi
Khoon may tar hua hay namazi
Inteha ho gayi hay jafa ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Rozadaron may mehshar bapa hay
Ya Ali Ya Ali ki sada hay
Hay azdari mushkil kusha ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Gir na jaye kaheen aaj Kaaba
Uth raha hay Ali ka janaza
Aa rahi hay sada kibriya ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Subh ikisveen ki hay qayamat
Murtaza par hay tooti museebat
Ibtida ho gayi Karbala ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

Aey Azeem o Najaf gham manao
Tum bhi Haider ka taboot uthao
Tum jaza pao gay is aza ki
Ibne Muljim pe lanat Khuda ki

زخمی پیشانی ہے مرتضیٰؑ کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

آسمان پر اُداسی ہے چھائی
غم میں ڈوبی ہوئی ہے خدائی
شیر دوار پہ جس نے جفا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

خلد میں فاطمہؑ رو رہی ہے
جان ام البنینؑ کھو رہی ہے
مضطرب ہیں صفیں انبیاء کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

کیوں نہ حورانِ جنت ہو گریاں
زینبِؑ غمزدہ ہے پریشان
ہے جبیں خون خیرالورا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

کیسے فضہؑ جگر کو سنبھالے
بی بی كلثومؑ کرتی ہے نالے
لاش اٹھتی ہے شاہ ھدی کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

حشر عالم میں ہے آج برپا
رو كے جبریلؑ کرتے ہیں نوحہ
ہائے ہائے علیؑ نے قضا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

کرتے ہیں ہائے ہائے
کیسے حسنینؑ کو چین آئے
غیر حالت ہے آل عبا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

سَر پٹکتے ہیں عباسؑ غازی
خون میں تر ہوا ہے نمازی
انتہا ہو گئی ہے جفا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

روزہ داروں میں محشر بَپا ہے
یا علیؑ یا علیؑ کی صدا ہے
ہائے مشکل كشاء نے قضا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

گر نا جائے کہیں آج کعبہ
اٹھ رہا ہے علیؑ کا جنازہ
آ رہی ہے صدا کبریا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

صبح اکیسویں کی ہے قیامت
مرتضیٰؑ پر ہے ٹوٹی مصیبت
ابتدا ہو گئی کربلا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی

اے عظیم و نجف غم مناؤ
تم بھی حیدرؑ کا تابوت اٹھاؤ
تم جزا پاؤ گے اِس عزا کی
ابنِ ملجم پہ لعنت خدا کی