Matam zameen pe hota hay aur arsh par buka
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



ماتم زمین پہ ہوتا ہے اور عرش پر بکا
تابوت مرتضیٰؑ کو اُٹھاتے ہیں انبیاء

چہرے پہ خون بہتا ہے سَر ہے شگافتہ
دنیا سے اِس طرح میرا مشکل كشاء چلا

وہ جس کو دیکھنا بھی عبادت کہا گیا
ڈوبا ہوا ہے خوں میں وہ چہرہ امامؑ کا

امت یتیم ہو گئی بے آسرا حیات
جو سب كے بوجھ اٹھاتا تھا دنیا سے اٹھ گیا

جن و ملك رسول و بشر سارے آ گئے
کس شان سے اٹھا تھا جنازہ امام کا

عباس کوؑ سپرد کیا ہے حسینؑ كے
جاتے ہوئے علیؑ کی ہے آنکھوں میں کربلا

زینب کہاں ہے پوچھتے ہیں غش میں مرتضیٰؑ
آنکھیں ہیں بند سامنے منظر ہے شام کا

مولاؑ ملا ہے آپ کو تابوت اور کفن
بے گور و بے کفن رہا لاشہ حسینؑ کا

بیٹا اسی کا پیاسا رہا تِین روز تک
قاتل کو اپنے جس نے كہ شربت عطا کیا

مشکل میں سب کی جان بچاتا تھا جو قمر
سجدے میں ظالموں نے اسے قتل کر دیا

Matam zameen pe hota hay aur arsh par buka
Taboot e Murtaza ko uthatay hain Ambiya

Chehray pe khoon behta hay sar hay shigafta
Dunya se is tarha mera mushkil kusha chala

Wo jis ko dekhna bhi ibadat kaha gaya
Dooba hua hay khoon may wo chehra Imam ka

Ummat yateem ho gayi be aasra hayat
Jo sab ke bojh uthata tha dunya se uth gaya

Jinn o Malak Rasool o bashar saray aa gaye
Kis shan se utha tha janaza Imam ka

Abbas ko supard kiya hay Hussain ke
Jatay huay Ali ki hay ankhon may Karbala

Zainab kahan hay poochtay hain ghash may Murtaza
Ankhain hain band samnay manzar hay Shaam ka

Mola mila hay aap ko taboot aur kafan
Be gor o be kafan raha lasha Hussain ka

Beta usi ka pyasa raha teen roz tak
Qatil ko apnay jis ne ke sharbat ata kiya

Mushkil may sab ki jaan bachata tha jo qamar
Sajday may zalimo ne usay qatl kar diya