Akbar tumhe maloom hai kya maang rahe ho
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Akbar tumhe maloom hai kya maang rahe ho

Tum baap se marne ki reza maang rahe ho

Is aalame ghurbat mein tumhe jaane doon kaise
Is dashte musibat mein tumhe jaane doon kaise
Is waqte kayamat mein tumhe jaane doon kaise
Ay laal jo tum izn wigaa maang rahe ho
Tum baap ...

Kya guzregi iss baap ke dil par nahin socha
Tumne ye meri jaan ali akbar nahin socha
Mar jaunga main tujhse bichhad kar nahi socha
Tum mujhse zaeefi ka asaa maang rahe ho
Tum baap ...

Dil rota hain nazron se agar door ho beta
Kis tarha judaai teri manzoor ho beta
Tum hi meri ankhein ho mera noor ho beta
Mujhse meri ankhon ki ziya maang rahe ho
Tum baap ...

Duniya se gaya jis ghadi mehboob khuda ka
Nana ki ziyarat ko tadapta tha nawasa
Aye laal tujhe is liye khaalik se tha manga
Maqbool huwi meri dua maang rahe ho
Tum baap ...

Islam pe khud apna lahoo rann mein bahao
Sine pe sina shaan se maidaan mein khaao
Tasweer payambar ki tahe khaak milao
Kya is liye marne ki riza maang rahe ho
Tum baap ...

Ek roz tujhe aan k manga tha phuphi ne
Atthara baras naazon se paala tha phuphi ne
Beton se bhi zyada tumhe chaha tha phuphi ne
Ehsaan jo zainab ne kiya maang rahe ho
Tum baap ...

Rakhte nahi tum iski khabar aye mere pyare
Kis darja mohabbat hai teri dil mein humaare
Nana ki mere shakl hai paikar mein tumhare
Tum soorate mehboobe khuda maang rahe ho
Tum baap ...

Sar tera bhi jiss waqt chadhega sare naiza
Hoga sare maidaan juda sar bhi tumhara
Hum shakle payambar ka gala kaatenge aadaa
Goya mere nana ka gala maang rahe ho
Tum baap ...

Baba mujh maloom hai kya maang raha hoon
Ek baap se marne ki riza maang raha hoon

Baba mujhe Amma ne bhi kuch dars diya hai
Adabe wafa se mujh aagah kiya hai
Pehle mein maru aap se wada ye liya hai
Buss is liye marn ki riza maang raha hoon
Ek baap se marne ki riza maang raha hun ...
Baba mujhe maaloom hai kya maang raha hun

Hai aap to baba bine khaatoon qayamat
Aur maa hai meri adna si ek pehkare ismat
Kya sine mein us ke nahin kuch jazbahe ismat
Mein madare muztar ka kaha maang raha hoon
Ek baap se marne ki riza maang raha hun ...
Baba mujhe maaloom hai kya maang raha hun

Baba mujhe ehwaale dil zaar pata hai
Hai sakht bohat manzile dushwaar pata hai
Aur deen ka mushkil mein hai sardaar pata hai
Yun aap se marne ki riza mangu raha hoon
Ek baap se marne ki riza mangu raha hun ...
baba mujhe maloom hai kya maang raha hun

Mai Shaer e Hassaas jigar soz hu khursheed
mehve gham e shabbir shab o roz hu khurshid
aalaam e masaeb se zameen doz hu khurshid
kashkol me kuch ashq e aza maang raha hu
Ek baap se marne ki riza mangu raha hun ...
baba mujhe maloom hai kya maang raha hun

اکبرؑ تمہیں معلوم ہے کیا مانگ رہے ہو 
تم باپ سے مرنے کی رضا مانگ رہے ہو 

اِس غربت میں تمہیں جانے دون کیسے 
اِس دشتِ مصیبت میں تمہیں جانے دون کیسے 
اِس قیامت میں تمہیں جانے دون کیسے 
اے لال جو تم اِذْن وغا مانگ رہے ہو 
تم باپ . . . 

کیا گزرے گی اِس باپ كے دِل پر نہیں سوچا 
تم نے یہ میری جان علی اکبرؑ نہیں سوچا 
مر جاؤنگا میں تجھ سے بچھڑ کر نہیں سوچا 
تم مجھ سے ضعیفی کا عصا مانگ رہے ہو 
تم باپ . . . 

دِل روتا ہے نظروں سے اگر دور ہو بیٹا 
کس طرح جدائی تیری منظور ہو بیٹا 
تم ہی میری آنکھیں ہو میرا نور ہو بیٹا 
مجھ سے میری آنکھوں کی ضیا مانگ رہے ہو 
تم باپ . . . 

دُنیا سے گیا جس گھڑی محبوب خدا کا 
نانا کی زیارت کو تڑپتا تھا نواسہ 
اے لال تجھے اِس لیے خالق سے تھا مانگا 
مقبول ہوئی میری دعا مانگ رہے ہو 
تم باپ . . . 
ؑ
اسلام پہ خود اپنا لہو رن میں بہاؤ
سینے پہ سِنا شان سے میدان میں کھاؤ 
تصویر پیمبرؐ کی تہہ خاک ملاؤ 
کیا اِس لیے مرنے کی رِضا مانگ رہے ہو 
تم باپ . . . 

اک روز تجھے آن کے مانگا تھا پھوپھی نے 
اٹھارہ برس نازوں سے پالا تھا پھوپھی نے 
بیٹو سے بھی زیادہ تمہیں چاہا تھا پھوپھی نے 
احسان جو زینبؑ نے کیا مانگ رہے ہو 
تم باپ . . . 

رکھتے نہیں تم اسکی خبر اے میرے پیارے 
کس درجہ محبت ہے تیری دِل میں ہماری 
نانا کی میرے شکل ہے پیکر میں تمھارے 
تم صورتِ محبوبِ خدا مانگ رہے ہو 
تم باپ . . . 

سَر تیرا بھی جس وقت چڑھے گا سرِ نیزہ 
ھوگا سرِ میدان جدا سَر بھی تمہارا 
ہمشکلِ پیمبرؐ کا گلا کاٹے گی اعدا 
گویا میرے نانا کا گلا مانگ رہے ہو 
تم باپ . . . 

بابا مجھے معلوم ہے کیا مانگ رہے ہوں 
اک باپ سے مرنے کی رِضا مانگ رہے ہوں 

بابا مجھے اماں نے بھی کچھ درس دیا ہے 
آدابِ وفا سے مجھ آگاہ کیا ہے 
پہلے میں مروں آپ سے وعدہ یہ لیا ہے 
بس اِس لیے مرنے کی رِضا مانگ رہا ہوں 

اک باپ سے مرنے کی رِضا مانگ رہا ہوں . . . 
بابا مجھے معلوم ہے کیا مانگ رہا ہوں 

ہیں آپ تو بابا بنِ خاتونِ قیامت 
اور ماں ہے میری ادنیٰ سی اک پیکرِ عصمت 
کیا سینے میں اُس كے نہیں کچھ جذبہءِ عصمت 
میں مادرِ مضطر کا کہا مانگ رہا ہوں 
اک باپ سے مرنے کی رِضا مانگ رہا ہوں . . . 
بابا مجھے معلوم ہے کیا مانگ رہا ہوں 

بابا مجھے احوال دِل زار پتہ ہے 
ہے سخت بہت منزلیں دشوار پتہ ہے 
اور دین کا مشکل میں ہے سردار پتہ ہے 
یوں آپ سے مرنے کی رِضا مانگو رہا ہوں 
اک باپ سے مرنے کی رِضا مانگو رہا ہوں . . . 
بابا مجھے معلوم ہے کیا مانگ رہا ہوں 

میں شاعرِ حساس جگر سوز ہوں خورشید 
محوِ غم شبیرؑ شب و روز ہوں خورشید 
آلامِ مصائب سے زمین دوز ہوں خورشید 
کشکول میں کچھ اَشْکِ عزا مانگ رہا ہو 
اک باپ سے مرنے کی رِضا مانگو رہا ہوں . . . 
بابا مجھے معلوم ہے کیا مانگ رہا ہوں