Tera ghar ho gaya veerana Haey Nana faryad hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

تیرا گھر ہو گیا ویرانہ ہائے نانا فریاد ہے

بھائی کو مہماں بلا کر ہئے ہئے شمرِ ستمگر
حلق پہ پھیرا ہے خنجر ہئے نانا فریاد ہے

بالی سكینہؑ روتی تھی باپ كے غم میں نہ سوتی تھی
مر گئی زندان میں گھٹ کر ہئے نانا فریاد ہے

بالی سكینہؑ کی میت عابدِ مضطرؑ کی غربت
سوچتی ہوں پھٹتا ہے جگر ہئے نانا فریاد ہے

کٹ گئے سقہؑ كے بازو بہہ گیا ارمانوں کا لہو
ہو گئے ہَم سب بن چادر ہئے نانا فریاد ہے

مارے گئے قاسمؑ اکبرؑ عونؑ و محمدؑ اور اصغرؑ
اجڑ گیا سب گھر کا گھر ہئے نانا فریاد ہے

آئی ہوں بھائی کو کھو کر ہئے نانا فریاد ہے

لُوٹ لیا امّت نے گھر ہئے نانا فریاد ہے

Tera ghar ho gaya veerana Haey Nana faryad hay

Bhai ko mehmaa bula kay Haey haey Shimr e sitamgar
Halq pe phairahay khanjar Haey Nana faryad hay

Bali Sakina roti thi Baap ke gham may na soti thi
Mar gayi zindaan may ghut kar Haey Nana faryad hay

Kat gaye saqqa ke baazu Beh gaya armano ka lahoo
Ho gaye ham sab bin chadar Haey Nana faryad hay

Bali Sakina ki mayyit Abid e muztar ki ghurbat
Sochta hoon phat-ta hay jigar Haey Nana faryad hay

Maaray gaye Qasim Akbar Aun o Muhammad aur Asghar
Ujar gaya sab ghar ka ghar Haey Nana faryad hay