Asghar haey Asghar
Efforts: Kamberali J. Shamji



asghar haye asghar
ay cheh mahine wale tujko mera salam

ay shahedeen ke dilbar ay roohe khalbe madar
ay tishnakaam muztar ay bezuban asghar
ay cheh mahine....
asghar haye....

tashnalabi pe teri girya hai ye khudaai
mazlumiat ne teri insaniyat jagayi
ay cheh mahine....
asghar haye....

sookhe labo pe tune jis dam zuban phirayi
sar ko jhuka ke roya dushman ka har sipahi
ay cheh mahine....
asghar haye....

kya manzilat hai teri shabbir-e-khastatan ne
dafna ke tera laasha farmaya purmehan ne
ay cheh mahine....
asghar haye....

shikwa na karna asghar pani nahi mayassar
aansu baha ke maine turbat ko kardiya tar
ay cheh mahine....
asghar haye....

yaade pisar jab aati jo kokh ujdi madar
raton ko uthkar aksar kehti thi dar pe aakar
ay cheh mahine....
asghar haye....

tareekhe karbala ko padkar anees dekho
qatil bhi sar jhukaye kehte milenge tumko
ay cheh mahine....
asghar haye....

اصغرؑ ہائے اصغرؑ
اے چھ مہینے والے تجھ کو میرا سلام

اے شاہ دیں کے دلبر، اے روح قلب مادر
اے تشنہ کام مضطر، اے بے زبان اصغر
اے چھ مہینے والے تجھ کو میرا سلام
اصغرؑ ہائے اصغرؑ

تشنہ لبی پہ تیری، گریہ ہے یہ خدائی
مظلومیت نے تیری، انسانیت جگائی
اے چھ مہینے والے تجھ کو میرا سلام
اصغرؑ ہائے اصغرؑ

سوکھے لبوں پہ تو نے، جس دم زباں پھرائی
سر کو جھکا کے رویا، دشمن کا ہر سپاہی
اے چھ مہینے والے تجھ کو میرا سلام
اصغرؑ ہائے اصغرؑ

کیا منزلت ہے تیری، شبیرؑ خستہ تن نے
دفنا کے تیرا لاشہ، فرمایا پرمہن نے
اے چھ مہینے والے تجھ کو میرا سلام
اصغرؑ ہائے اصغرؑ

شکوہ نہ کرنا اصغرؑ، پانی نہیں میسر
آنسوں بہا کے میں نے، تربت کو کر دیا تر
اے چھ مہینے والے تجھ کو میرا سلام
اصغرؑ ہائے اصغرؑ

یاد پسر جب آتی، تو کوکھ اجڑی مادر
راتوں کو اٹھ کر اکثر، کہتی تھی در پہ اگر
اے چھ مہینے والے تجھ کو میرا سلام
اصغرؑ ہائے اصغرؑ

تاریخ کربلا کو، پڑھ کر انیس دیکھو
قاتل بھی سر جھکائے، کہتے ملیں گے تم کو
اے چھ مہینے والے تجھ کو میرا سلام
اصغرؑ ہائے اصغرؑ