Hay ibadat Hussain ka matam
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

Chomty hain usay farishty bhi 
Matami hath jab uthata hay

Khoon bahaya na ruk saka matam
Zakhm banty na ruk saka matam
Hath katay na ruk saka matam
Hath katay na ruk saka matam 

Thak k kehny lagain ye talwarain
Ye ibadat to mojzana hay
Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

Nohay parhty hain nooh jaise nabi
Ambiya khud safain banaty hain
Wo ibadat h matam e shabbir
Arsh waly bhi kitny atay hain

Farsh matam ka wo mussala hay
Jis pe kaba namaz parhta hay
Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

Inki awaz hai azan jaisi
Nala e haq hay karbala hay
Shan iske nishan ki mat pocho
Fatah e shah ki ata hay yeh

Dagh e matam wo dagh hay jis main
Hajr e aswad dikhai deta hay
Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

Farsh matam ka farsh h aisa
Daikh kar arsh jhoomta hay jise
Aisa sina h matami sina
Khoon pasina b chomta hay jise

Matami hath hath hay aisa
Jo ke jannat ka ghar banata hay
Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

Taqat e matam e hussain bani 
Lal sain ki taqat e parwaz
Yehi taghoot e la makan
Yehi abdullah shah ki awaz

Yehi nara bhi hai malangon ko
Yehi rasm e qalandarana hay
Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

Taigh o shamsheer pe jo wajib thy 
Wo bhi qarze chukaye hain isne
Jin pe takhdeerain naz karti hain
Wo muqaddar banaye hain isne

Yeh bachata hay nar e dozakh se 
Yehi qaidi ko Hur banata hay
Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

Khanch leta h jo naqabon ko 
Kitna mazboot hath h iska
Aur haqeeqat se bhi ye waqif hay
Khoon kis ki ragon main h kiska

Sath naslain ye khool deta hay
Sub ka nam o nasab batata hay
Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

Daikh kar iski saf main nabyon ko
Daikh kar iska mojzati asar
Daikh kar iski fazilat o azmat
Bat ta hashr hogai ye gohar

Jo karay ga hussain ka matam
Matami woh shareefzada hay
Hay ibadat Hussain ka matam 
Hum ko Quran ne bataya hay

ہے عبادت حسینؑ کا ماتم 
ہم کو قرآں نے یہ بتایا ہے 
چومتے ہیں اِسے فرشتے بھی 
ماتمی ہاتھ جب اٹھاتا ہے 

خوں بہایا نہ رُک سکا ماتم 
زخم کھا کے نہ رُک سکا ماتم 
ہاتھ باندھے نہ رُک سکا ماتم 
ہاتھ کاٹے نہ رُک سکا ماتم 

سبھی کہنے لگیں یہ تلواریں
یہ عبادت تو معجزانہ ہے 
ہے عبادت حسینؑ کا ماتم 
ہم کو قرآں نے یہ بتایا ہے 

جب بھی ہوتی ہے مجلسِ شبیرؑ
خود ہوائیں دیے جلاتی ہیں
سر پہ ہوتا ہے سایئہِ رحمت
آیتیں غم میں جگمگاتی ہیں 
----------
چاند خود چاندنی بچھاتا ہے

نوحے پڑھتے ہیں نوحؑ جیسے نبی 
انبیاء خود صفیں بناتے ہیں 
وہ عبادت ھے ماتمِ شبیرؑ
عرش والے بھی جس میں آتے ہیں 
فرش ماتم کا وہ مصلیٰ ہے 
جس پہ کعبہ نماز پڑھتا ہے 

آسمان و زمین و لوح ہ قلم
اِس حقیقت کو مانتے ہیں سبھی
حج و خمس و زکواۃ و روزہ کیا
اِس کے دم سے ہیں یہ نمازیں بھی
یہ عبادت تو وہ عبادت ہے
ہر عبادت کو جس نے پالا ہے

اُنکی آواز ہے اَذاں جیسی 
نالہءِ حق ہے کربلا ہے یہ
شان اِس کے نشاں کی مت پوچھو 
فاتحِ شام کی عطا ہے یہ 
داغ ماتم وہ داغ ہے جس میں 
ہجرِ اسود دکھائی دیتا ہے 

فرش ماتم کا فرش ھے ایسا 
دیکھ کر عرش جھومتا ہے جسے 
ایسا سینہ ھے ماتمی سینہ
طورِ سینا بھی چومتا ہے جسے 
ماتمی ہاتھ ہاتھ ہے ایسا 
جو كہ جنت میں گھر بناتا ہے 

طاقتِ ماتمِ حسینؑ بنی 
لعل سائیں کی طاقتِ پرواز 
یہی لاہوت لا مکاں کی صدا
یہی عبداللہ شاہ کی آواز 
یہی نعرہ بھی ہے ملنگوں کا
یہی رسمِ قلندرانہ ہے 

تیغ و شمشیر پہ جو واجب تھے 
وہ بھی قرضے چکائے ہیں اِس نے 
جن پہ تقدیریں ناز کرتی ہیں 
وہ مقدر بنائے ہیں اِس نے 
یہ بچاتا ہے نارِ دوزخ سے 
یہی قیدی کو حُر بناتا ہے 

کھینچ لیتا ھے جو نقابوں کو 
کتنا مضبوط ہاتھ ھے اس کا 
اِس حقیقت سے بھی یہ واقف ہے 
خون کس کی رگوں میں ھے کس کا 
سات نسلوں کو کھول دیتا ہے 
سب کا نام و نسب بتاتا ہے 

دیکھ کر اسکی صف میں نبیوں کو 
دیکھ کر اس کا معجزاتی اثر 
سُن کر اسکی فضیلت و عظمت 
بات طے ہوگئی یہ گوہر 
جو کرے گا حسینؑ کا ماتم 
آدمی وہ شریف زادہ ہے 

ہے عبادت حسینؑ کا ماتم 
ہم کو قرآں نے یہ بتایا ہے