Teri Zehra ka zamanay ne sataya baba
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



تیری زہراؑ کو زمانے نے ستایا بابا 
تیرے فرمان کو لوگوں نے بھلایا بابا 

بعد تیرے نہ دیا چین سے رہنے مجھ کو 
جو ستم میں نے سہے کیسے سُناؤں تجھ کو 
نہ دیا حق بھی مجھے، دَر بھی گرایا بابا 

تم کو دربار کی روداد سناؤں کیسے 
جیسے چنتا ہے کوئی اپنے جگر كے ٹکڑے 
ایسے تحریر كے ٹکڑوں کو اٹھایا بابا 

جب تصور میں نظر شامِ غریباں پہ گئی 
جلتے خیموں سے سكینہؑ کی صدا آنے لگی 
اپنا بچپن مجھے روتا نظر آیا بابا 

کیسا مجھ پر ہے ستم ڈھایا یہ آ کر دیکھو 
میں ہوں زخمی میرا محسنؑ نہ بچا ہے دیکھو 
میرے حیدرؑ کو بھی قیدی ہے بنایا بابا 

کیسے یہ دنیا بھولی ہے وہ منظر محسن
دیکھ کر زہراؑ کو روتے تھے حسنینؑ
جب حیدرؑ نے جنازہ تھا اٹھایا بابا 

پوچھو بابا حق زہراؑ کو دیا نہ کس نے 
اٹھایا کس نے 
شبرؑ و شبیر کو چادر میں چھپایا بابا 

Teri Zahra ko zamanay ne sataya baba
Teray farman ko logon ne bhulaya baba

Baad teray na diya chain se rehnay mujh ko
Jo sitam may ne sahay kaise sunayoon tujh ko
Na diya haq mujhe dar bhi giraya baba

Tum ko darbar ki roodad sunayoon kaise
Jaise chunta hay koi apnay jigar ke tukray
Aisay tehrir ke tukrroon ko uthaya baba

Jab tasawwur may nazar shaam e gharibaan pe gaye
Jalte kahimoon se Sakina ki sada aanay lagi
Apna bachpan mujhe rota nazar aaya baba

Kaisa sitam mujhe pe hay dhayaa aa dekho
May hoon zakhmi aur Mohsin bhi na raha dekho
Meray Haider ko bhi qaidi hay banaya baba

Kaise ye dunya bhoolay hay wo manzar Mohsain
Dekh kar Zehra ko rotay thay Hasanain
Jab Haider ne janaza tha uthaya baba

Pocho baba haq Zahra ko diya na kis ne
 uthaya kis ne
Shair or Shabbir ko chadar may chupaya baba