Tha ye bano ka bayan kis ko doon ab lorian
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Tha ye Bano ka bayan, kis ko doon ab lorian
Dhoondti phirti hay maadar hay mera Asghar kahan

Tera jhoola jal gaya, aey meray tishna dahaan
Dhoondti phirti hay maadar hay mera Asghar kahaan

Haey woh nazuk gala, teen din se khushk tha
Barhh ke moj e teer ne wo, kis qadar zakhmi kiya
Tar hui khoon se zabaan, le sakay na hichkiyaan
Dhoondti phirti hay maadar hay mera Asghar kahaan

Khoon bhara kurta tera, haey wo bhi chin gaya
Ab jiyon kis ke saharay, paas meray kiya raha
zindagi hay raegan, umar bhar hoon noha khawan
Dhoondti phirti hay maadar hay mera Asghar kahaan

Khaali jhoola dekh kar, aey meray noor e nazar
Ankh faryadi hay meri, aur rota hay jigar
Soo gaye ho tum kahan, chain paya kaisay maa
Dhoondti phirti hay mada hay mera Asghar kahaan

May musafir Shaam ki, khatm had aaram ki
Qaid ho kar ja rahi hoon, gard hay aalam ki
Bandh chuki hain rassiyan, ham kahaan ab tum kahaan
Dhoondti phirti hay maadar hay mera Asghar kahaan

Jaam ashkon ke piyo, aaj ki shab soo rahoo
Umr lag jaye hamari, tum yuhin jeetay rahoo
Tum pe qurbaan meri jaan, aey qarar e be-kasaan
Dhoondti phirti hay maadar hay mera Asghar kahaan

Mir kiya Rehan kiya, jis ne ye Noha suna
Ashk ankhon se baha kar, us ne ro ro kar kaha
Haey wo Asghar ki maa, Uff wo tera imtehaan
Dhoondti phirti hay maadar hay mera Asghar kahaan

تھا یہ بانو کا بیاں ، کس کو دوں اب لوریاں
ڈھونڈتی پھرتی ہے مادر ، ہے میرا اصغرؑ کہاں
تیرا جھولا جل گیا ، اے میرے تشنہ دھاں
ڈھونڈتی پھرتی ہے مادر ، ہے میرا اصغرؑ کہاں

ہائے وہ نازک گلا ، تین دن سے خُشک تھا
بڑھ کے موجِ تیر نے وہ ، کِس قدر زخمی کیا
تر ہوئی خوں سے زبان ، لے سکے نہ ہچکیاں
ڈھونڈتی پھرتی ہے مادر ، ہے میرا اصغرؑ کہاں

خوں بھرا کرتا تیرا ، ہائے وہ بھی چھن گیا
اب جیوں کِس کے سہارے ، پاس میرے کیا رہا
زندگی ہے رائگاں ، عمر بھر ہوں نوحہ خواں
ڈھونڈتی پھرتی ہے مادر ، ہے میرا اصغرؑ کہاں

خالی جھولا دیکھ کر ، اے میرے نورِ نظر
آنکھ فریادی ہے میری ، خاک ہوتا ہے جگر
سو گئے ہو تم کہاں ، چین پائے کیسے ماں
ڈھونڈتی پھرتی ہے مادر ، ہے میرا اصغرؑ کہاں

میں مسافر شام کی ، ختم حد آرام کی
قید ہو کر جا رہی ہوں ، گَرد ہے آلام کی
بندھ چکی ہیں رسیاں ، ہم کہاں اب تم کہاں
ڈھونڈتی پھرتی ہے مادر ، ہے میرا اصغرؑ کہاں

جام اشکوں کے پیو ، آج کی شب سو رہو
عمر لگ جائے ہماری ، تم یونہی جیتے رہو
تم پہ قرباں میری جاں ، اے قرارِ بیکساں
ڈھونڈتی پھرتی ہے مادر ، ہے میرا اصغرؑ کہاں

میر کیا ریحان کیا ، جس نے یہ نوحہ سُنا
اشک آنکھوں سے بہا کر ، اُس نے رو رو کر کہا
ہائے وہ اصغرؑ کی ماں ، اُف وہ تیرا امتحاں
ڈھونڈتی پھرتی ہے مادر ، ہے میرا اصغرؑ کہاں