Teeran di janamaz te sajda Hussain da
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



تیروں کی جانماز پہ سجدہ حسینؑ کا 
پڑھتے ہیں سارے كلمہ، صدقہ حسینؑ کا 

یا رب خبر کرا دے، خیمے میں آ نہ جائے 
تیروں کا سُن كے زینبؑ، مقتل میں آ نہ جائے 
روتی ہے دیکھ منظر ، نانا حسینؑ کا 

کیسے کروں نہ ماتم، بارات لٹ گئی ہے 
مہندی حسنؑ كے لال کی، ریتوں میں بہہ گئی ہے 
ٹکڑے ہوا ہے قاسمؑ ، پیارا حسینؑ کا 

اصغرؑ کا خون لے كے، ہوئی با وضو امامت 
ہـــــوئی نماز قائم، رہنی ہے تا قیامت 
کرتا طواف کعبہ، ہر دم حسینؑ کا 

بازاروں سے گزر كے، دربار میں پہنچ كے 
کعبے میں جو بچے تھے، زینبؑ نے بُت وہ توڑے 
خطبہ علیؑ کی بیٹی کا ، خطبہ حسینؑ کا

ہَم نہ بھلا سکیں گے، سجادؑ کا یہ رونا
اکبرؑ كے سینے برچھی، اصغرؑ کا نیزے چڑھنا 
رہے گا امیر ہر دم ، ماتم حسینؑ کا

Teeron ki janamaz pe sajda Hussain ka
Parhtay hain saray kalam, sadqa Hussain ka

Ya Rab khabar kara day, kahimay may aa na jaye
Teeron ka sun ke Zainab, maqtal may aa na jaye
Roti hay dekh manzar, Nana Hussain ka

Kiase karoon na matam, barat lut gaye hay
Mehndi Hasan ke laal ki raiton may beh gaye hay
Tukray hua hay Qasim, pyara Hussain ka

Asghar ka khoon le ke, hui ba wozoo Imamat
Hui hay namaz qayam, rehni hay ta qayamat
Karta tawaf Kaaba, har dam Hussain ka

Sajjad ka ye rona, ham na bhula sakain gay
Akbar ke seenay barchi, Asghar ka naizay charna
Rehay ga Ameer har dam, matam Hussain ka

Bazaron se guzar ke, darbar may pohanch ke
Kaabay may bachay thay, Zainab ne but wo toray
Khutba Ali ki beti ka, khutba Hussain ka

Teeran di janamaz te sajda Hussain da
Parhday nay saray kalma sadqa Hussain da

Ya Rab khabar kara day wich khaimay aa na jaway
Teeran da sun ke Zainab maqtal ch aa na jaway
Rownda aey waikh manzar Nana Hussain da

Kiwain karan na matam barat rul gaye aey
Mehndi Hasan day laal di raitain te dul gaye aey
Hoya aey tukray tukray Qasim Hussain da

Asghar da khoon le ke keeta wozoo Imamat
Hoyi namaz qayam rehni aey ta qayamat
Karda tawaf Kaaba har dam Hussain da

Bhul si kadi na sa koon Sajjad da aey rona
Akbar de seenay barchi Asghar da naizay charna
Reh si Ameer har dam matam Hussain da

Bazaran chon guzar ke darbar wich khalo ke
Kaabay de jairay bach gaye Zainab ne but oo toray
Khutba Ali di dhi da Khutba Hussain da