Bas aik janaza baqi hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Bas Aik Janaza Baaqi Hai (X2)
Aajaye Imam-e-Zaman Abhi, Bas Aik Janaza Baaqi Hai (x2)
Aajaye Imam-e-Zaman Abhi, Bas Aik Janaza Baaqi Hai ,
Sab lashe uthakar lekeh gaye, Shabbir ka lasha baaqi hai

Wo burz aur teero se na pathar kitna tardpa Zehra ka pisar
Hai jism zameen par karbal ki, aur sar hai noke nayza par
Garden hai qati qible ki taraf, Wo aakhri sajda baaqi hai

Kahta hai koi mazloom hame, koi to chahe wala hai
Jo adl se duniya ko bhar de, aisa koi aane wala hai
Har qoum ki ek ummeed hai bus aye deen ka sahara baaqi hai

Sab ahle aza maanga ab,ho jaaye zahoor abhi logo
Athara baras ka ek jawaan, dam tordh raha hai deko to
Sehra akbar ke sar pe saja , wo qaaishe sughra baaqi hai

Aako mein imam-e-asr ke hai, wo sham e gareeba ka manzar
Naize ki anee se cheeni gayi zehra ke beti se chaadar
Naize se jo sar pa zakm laga, us zakhm ka badla baaqi hai.

Wo waasib tha darbare shaqi wo, manzil shaam aur kufa ki
Zehra se fiddak ko cheena gaya, zainab se chaadar cheeni gayi
Dono darbar thay zalim ke, dono ka badla baaqi hai.

Ek laash hai qaima-e-qaibat mein, ek pal maula ko qaraar nahi
Kis karb se maula kahte hai, naser mera taiyaar nahi,
Wo laasha-e-sheh ke tukde hai, taboot uthana baaqi hai.

Maae phupiya hai saat qaadhi, hai sar ko jhukaaee gairat se
Nabiyo valiyo to sakta hai Sajjad ke gham ki shiddat se
Yeh shaam ki galiyo se guzarna hai, darbaar mein jana baaqi hai

Saaye mein kabhi nahi aati hai, maa qaali jhula jhulati hai
Pamaal lahad ki baqaiye se zehra ki saada yeh aati hai
Pyaasa hai ali asghar ab bhi , mohsin ka badla baaqi hai

Rone nahi dete baba ko hai koaf sakina par tariff
Zindaan se sakina mar bhi gayi, kaano se khoon ab bhi jaari
Wo shimr ke muh par lagna hai, har aik tamacha baaqi hai

Be maqna aur chaadar ahle haram, hai kufa aur shaam mein mehva safar
Yeh saatwe dar par zainab ne, sajaad ko phoocha ro ro kar
Ab kitni manzil rahti hai ab kitna rasta baaqi hai,

بس ایک جنازہ باقی ہے
آجا اے امام زمانؑ ابھی ، بس ایک جنازہ باقی ہے
آجا اے امام زمانؑ ابھی ، بس ایک جنازہ باقی ہے
سب لاشے اُٹھا کر لے بھی گئے ، شبیرؑ کا لاشہ باقی ہے

وہ گُرز و تیر و سِناں پتھر ، کتنا تڑپا زہراؑ کا پسر
ہے جسم زمیں پر کربل کی ، اور سَر ہے نوکِ نیزہ پر
گردن ہے کٹی قبلے کی طرف ، وہ آخری سجدہ باقی ہے

کہتا ہے ہر-اِک مظلوم ہمیں ، کوئـی تو چاھنے والا ہے
جو عدل سے دُنیا کو بھر دے ، ایسا کوئی آنے والا ہے
ہر قوم کی اِک امید ہے بس ، مہدیؑ کا سہارا باقی ہے

سب اہل عزا مانگیں یہ دعا ، ہو جائے ظہور ابھی لوگو
اَٹّھارَہ برس کا ایک جواں ، دم توڑ رہا ہے دیکھو تو
سہرا اکبرؑ كے سَر پہ سجے ، وہ خواہشِ کبریٰؑ باقی ہے

آنکھوں میں امام عصرؑ کے ہے ، وہ شامِ غریباں کا منظر
نیزے کی انی سے چھینی گئی ، زہراؑ كی بیٹی سے چادر
نیزے سے جو سَر پہ زخم لگا ، اُس زخم کا بدلہ باقی ہے

وہ غاصب کا دربار شقی ، وہ منزل شام اور کوفہ کی
زہراؑ سے فدک کو چھینا گیا ، زینبؑ سے چادر چھینی گئی
دونوں دربار تھے ظالم كے ، دونوں کا بدلہ باقی ہے

اِک لاش ہے خیمہءِ غیبت میں ، اک پل مولاؑ کو قرار نہیں
کس کرب سے مولاؑ کہتے ہیں ، نوکر میرے تیار نہیں
یہ لاشہءِ شہہؑ كے ٹکڑے ہیں ، تابوت اٹھانا باقی ہے

ہــائے پھپھیاں ہیں ساتھ کھڑی ، ہے سَر کو جھکائے غیرت سے
نبیوں ولیوں کو سکتا ہے ، سجادؑ كے غم کی شدت سے
یہ شام کی گلیوں سے گزرا ، دربار میں جانا باقی ہے

سائے میں کبھی نہیں آتی ہے ، ماں خالی جھولا جھلاتی ہے
پامال لحد سے بقیعے کی ، زہراؑ کی صدا یہ آتی ہے
پیاسا ہے علی اصغرؑ اب بھی ، محسنؑ کا بدلہ باقی ہے

رونے نہیں دیتے بابا کو ، ہے خوف سكینہؑ پر طاری
زندان میں سكینہؑ مر بھی گئی ، کانوں سے ہے خوں اب بھی جاری
جو شمر كے منہ پر لگنا ہے ، ہر ایک تمانچہ باقی ہے

بے مقنع و چادر اہلِ حرم ، ہیں کوفہ و شام میں محوِ سفر
یہ ساتویں دَر پر زینبؑ نے ، سجادؑ سے پوچھا رو رو کر
اب کتنی منزلیں رہتی ہیں ، اب کتنا رستہ باقی ہے

رویا ہے قمر لمحہ لمحہ ، اور خونِ جگر سے لکھا بھی
پڑھتا ہوں زیارت نـاحیہ ، پڑھتا ہوں دعائے ندبہ بھی
جو کربِ امامؑ بیاں کر دے ، وہ نوحہ لکھنا باقی ہے