Ye matam sada rahay aur is se siwa rahay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



یہ ماتم صدا رہے اور اِس سے سوا رہے
یہ فرش عزا اے سبطِ نبیؑ تا محشر بچھا رہے

کتنی ہی اُٹھے ظلمت کی گھٹا
ہو کتنی ہی تاریک فضا
بجھنے نہیں پائے شمعِ عزا
کتنے ہی اُٹھیں طوفان مگر
روشن یہ دیا رہے

اِک نسل ہٹے، اِک نسل بڑھے
اِک شمع بجھے، اِک شمع جلے
شبیرؑ کا ماتم ہوتا رہے
نسلاً بعدَ نسلاِ یونہی
جاری سلسلہ رہے

کٹتے رہیں سر ، لٹتے رہیں گھر
ڈھاتی رہائی دنیا ظلم مگر
چھوٹے نہ کبھی شبیرؑ کا در
شبیرؑ کے غم سے عالم کا
ہر گوشئہ سجا رہے

یہ ظلم و ستم ، یہ جور و جفا
کیا روکیں گے رستہ تیرا
بڑھ اور دو عالم پر چھا جا
تا عرش زمین پر چھائی ہوئی
ماتم کی گھٹا رہے

غم خوارِ شہہِ اَبرارؑ ہیں ہم
باطل کے لئے تلوار ہیں ہم
تاریخ کا وہ کردار ہیں ہم
مر سکتے ہیں مٹ سکتے نہیں
ذہنوں میں ذرا رہے

ہم پلتے رہے طوفانوں میں
بہتے رہے خوں کی دھاروں میں
چنوائے گئے دیواروں میں
خود مٹ گئے بانیءِ ظلم مگر
ہم اہلِ عزا رہے

خونِ دل سے ہاں اہلِ عزا
ہر موڑ سے تا بہ کرب و بلا
روشن رکـــھو اِک اِک ذرہ
ہر آنے والے حرؑ کے لئے
یہ رستہ کھلا رہے

کتنوں کے چہرے اُتر گئے
یہ حکم جب آیا جس جس کے
مسجد میں ہیں کھلتے دروازے
سب بند ہوں بس اِک زہراؑ کا
دروازہ کھلا رہے

تھک ہار کے لشکر لوٹ آیا
سر معرکہءِ خیبر نہ ہوا
دی ہنس کے صدا احمدؐ نے کہ آ
اے دستِ خدا دَر خیبر کے
ہیں تجھ کو بلا رہے

سوکھے ہوئے لب، ہل مِن کی صدا
تاریخ بھلا سکتی ہے بھلا
کیا عالمِ غربت ہے با خدا
ہے کون ستم سہہ کر اتنا
راضی با رضا رہے

Ye Matam Sada Rahay Aur Iss Sai Siva Rahay
Ye Farsh-e-Aza-e-Sibtai Nabhi Ta Mehshar Bicha Rahay

Kitni Hi Uthai, Zulmat Ki Ghata
Ho Kitni Hi Tareek Fiza
Bujhnay Nahi Paaey Shammay Aza
Kitnay Hi Uthain Toofaan Magar Roshan Yai Diya Rahay

Aik Nasal Hatay, Aik Nasal Barhay
Aik Shamma Bujhay Aik Shamma Jalay
Shabbir Ka Matam Hota Rahay
Naslam Baday Naslin Yoonhi, Jaari Silsila Rahay

Kat Tai Rahain Sar, Luthay Rahain Ghaar
Dhaati Rahai Dunya Zulm Magar
Chootai Na Kabhi Shabbir Ka Ghaar
Shabbir Kai Gham Sai Aalam Ka Har Gosha Sada Rahai

Yai Zulm-o-Situm, Yai Joar-o-Jafa
Kya Rokaingai Rasta Tera
Barh Aur Do Alaam Parcha Ja
Ta Arsh Zameen Par Chaee Huwi, Matam Ki Ghata Rahai

Gham Khuwaar-e-Shah-e-Abrar Hai Hum,
Baatil Kai Liyai Talwaar Hai Hum,
Tareekh Ka Wo Kirdaar Hai Hum,
Marsaktay Hain Mit Saktay Nahi, Zehnon’ Main Zara Rahay

Hum Paltai Rahay Toofanon’ Main
Behtai Rahay Khoon Ki Dhaaron’ Main
Choonwaaey Gaey Deewaron Main,
Khud Mit Gaey Baani-e-zulm Magar, Hum Ahlay-aza Rahay

Khoon-e-Dil Sai, Haan Ahlay Aza
Har Moar Sai Ta’aba Karbobala
Roshan Rakho Aik Aik Zarra
Har Aanay Walay Hurr Kai Liyai, Yai Rasta Khula Rahay

Kitnon’ Kai Chehrai Utar Gaey
Yai Hukm Jub Aaya Jis Jis Kai
Masjid Main Hain Khultai Darwaazay
Sab Band Hon’ Bas Aik Zahra Ka Darwaaza Khula Rahay

Thak Haar Kai Laskhar Lot Aaya
Sar Maar Gaey Khaibar Na Huwa
Di Hans Kai Sada Ahmad Nai Kai Aah,
Ai Dast-e-Khuda Khaibar Dar Khaibar Kai, Hain Tuj Ko Bula rahay

Sookhay Huway Lab, Halmin Ki Sada
Tareekh Bhula Sakti Hai Bhala
Kya Alam-e-ghurbat Hai Ba Khuda
Hai Kon Situm Seh Kar Itnai, Raazi Ba Raza Rahay