Bohat ro chuki hay Sakina - Allah
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Haaye haaye haaye (x3)
khaamoshiyon se hi pucho
In aansuon se hi pucho (x2)

Barre zulm raahon me sehti rahi hai
Yateemi ke taane yeh sehti rahi hai
Nahi maar zalim tamaache ise
Na kar iska dushwaar jeena
Bohat ro chuki hay Sakina(as) (x2)

Safar me yeh soyi na zindaan aakar
Ujaala kiya hai yahan dil jala kar
Padar se jo bichrri hay ashooor ko
Sukoon paa saki phir kabhi na
Bohat ro chuki hay Sakina(as) (x2)

Mila dasht me jab ke baba ka laasha
Lipat ke padar se kiya khoob girya
Wahan pahunchi Zainab(sa) to Sheh ne kaha
Sulaa do ise jaa ke behnaa
Bohat ro chuki hay Sakina(as) (x2)

Rasan de gayi hai nishaani gale par
Hay peshaani zakhmi jo khaaye the patthar
Nishaan hai tamachon ke rukhsaar par
Masaaeb se zakhmi hai seena
Bohat ro chuki hay Sakina(as) (x2)

Kabhi apne baba ke qatil se dar kar
Kabhi royi zindaan me tanhaaiyon par
Kabhi boli Zainab(sa) ke ab ghar chalo
Hua ek baras ek mahina
Bohat ro chuki hay Sakina(as) (x2)

Qayamat ki ek raat aisi bhi aayi
Qaza ne Sakina(as) ko loree sunaayi
Kaha roke Sajjad(as) ne aye phuphi
Ke ab royegi phir kabhi na
Bohat ro chuki hay Sakina(as) (x2)

Jo qabr-e-Sakina(as) pe rote the qaidi
To un rone walon se Baano yeh kehti
Abhi thak ke soyi hai zindaan me
Jagaana ise ab koi na
Bohat ro chuki hay Sakina(as) (x2)

Yeh kehta hai Farhan se roke Mazhar
Jo qabr-e-Sakina(as) pe jaana biradar
Wahan marsiya jaake kehna yehi
Bohat ro chuki hay Sakina(as) (x2)

ہائے ہائے ہائے
خاموشیوں سے ہی پوچھو
اِن آنسوؤں سے ہی پوچھو

بڑے ظلم راہوں میں سہتی رہی ہے
یتیمی كے تعنے یہ سہتی رہی ہے
نہیں مار ظالم طمانچے اسے
نہ کر اس کا دشوار جینا
بہت رو چکی ہے سكینہؑ

سفر میں یہ سوئی نہ زندان آکر
اجالا کیا ہے یہاں دِل جلا کر
پِدَر سے جو بچھڑی ہے عاشور کو
سکون پا سکی پِھر کبھی نہ
بہت رو چکی ہے سكینہؑ

ملا دشت میں جب كہ بابا کا لاشہ
لپٹ كے پِدَر سے کِیا خوب گریا
وہاں پہنچی زینبؑ تو شہہ نے کہا
سلا دو اسے جا كے بہنا
بہت رو چکی ہے سكینہؑ

رسن دے گئی ہے نشانی گلے پر
ہے پیشانی زخمی جو کھائے تھے پتھر
نشان ہیں تمانچوں كے رخسار پر
مصائب سے زخمی ہے سینہ
بہت رو چکی ہے سكینہؑ

کبھی اپنے بابا كے قاتل سے ڈر کر
کبھی روئی زندان میں تنہائیوں پر
کبھی بولی زینبؑ كہ اب گھر چلو
ہوا اک برس اک مہینہ
بہت رو چکی ہے سكینہؑ

قیامت کی اک رات ایسی بھی آئی
قضا نے سكینہؑ کو لوری سنائی
کہا روکے سجادؑ نے اے پھوپھی
كہ اب روئےگی پِھر کبھی نا
بہت رو چکی ہے سكینہؑ

جو قبرِ سكینہؑ پہ روتے تھے قیدی
تو ان رونے والوں سے بانو یہ کہتی
ابھی تھک كے سوئی ہے زندان میں
جگائےاسے اب کوئی نا
بہت رو چکی ہے سكینہؑ

یہ کہتا ہے فرحان سے روکے مظہر
جو قبر سكینہؑ پہ جانا
وہاں جاکے کہنا یہی
بہت رو چکی ہے سكینہؑ