Dasht may goonj rahi thi Ali Akbar ki azaan
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Dasht may goonj rahi thi Ali Akbar ki azaan
Haey jhulta di laeno ne Muhammad ki zubaan

Waqt e rukhsat Ali Akbar se ye Zainab ne kaha
Tum pe qurban zamana aey meri raahat e jaan

Aisi azaan parrhi Karbo bala ronay lagi
Cha gayi sham e gharibaan may ye pyason ki fughan

Ashk Shabbir ki ankhon se to rukhtay hi nahi
Haey takhti thi ke jaise koi parrhta ho quraan

Allah Allah meray jazbat bikhar jaatay hain
Ro ke Zainab ye pukari koi day mujh ko amaan

Joarr kar hathon ko Akbar se Sakina ne kaha
Bhayya meray ho fida tum pe meri nanhi si jaan

Ik talatum tha bapa foaj e sitamgaron may
Meri awaz may hota tha Muhammad ka gumaan

Sun ke azaan Madinay may wo tarrpi ho gi
Jis ki nazron may hain Akbar teray qadmo ke nishaan

Aaj jo Allaho Akbar ki sada goojti hay
Us ko Yawar khoon e Akbar ne kiya phir se jawan

دشت میں گونج رہی تھی علی اکبرؑ کی اذاں
ہائے جھٹلا دی لعینوں (۲) نے محمدؐ کی زباں

وقتِ رخصت علی اکبرؑ سے یہ زینبؑ نے کہا 
تم پہ قربان زمانہ (۲) اے میری راحتِ جاں

آ کے لے جانا مجھے رو کے یہ صغرا نے کہا 
سر پہ جب سہرا سجانا (۲) اے میرے بھائی جاں

ایسی آذان پڑھی کرب و بلا رونے لگی
چھا گئی شامِ غریباں (۲) میں یہ پیاسوں کی فغاں

اشک شبیرؑ کی آنکھوں سے تو رکتے ہی نہیں
بھائی تکتی تھی كہ جیسے (۲) کوئی پڑھتا ہو قرآں

اللہ اللہ میرے جذبات بکھر جاتے ہیں 
رو كے زینبؑ یہ پُکاری (۲) کوئی دے مجھ کو اماں

جوڑ کر ہاتھوں کو اکبرؑ سے سكینہؑ نے کہا 
بھیا میرے ہو فدا تم (۲) پہ میری ننھی سی جاں

اِک تلاطم تھا بَپا فوجِ ستمگاروں میں
میری آواز میں ہوتا (۲) تھا محمدؐ کا گماں

سُن كے آذان مدینے میں وہ تڑپی ہو گی
جس کی نظروں میں ہیں اکبرؑ (۲) تیرے قدموں كے نشاں

آج جو االلہ ھو اکبر کی صدا گونجتی ہے 
اِس کو یاور خون اکبرؑ (۲) نے کیا پِھر سے جواں