Ye hidayaton ki jaza mili
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



یہ ہدایتوں کی جزا ملی
یہ عنایتوں کا صلہ دیا
وہ چراغ قبرِ نبیؐ کا تھا
جسے کربلا میں بجھا دیا

یہ حسینؑ تیرا ہی کام تھا
کہ سب اپنے لال فدا کئے
تجھے اِن ستاروں نے ڈوب کر
شبِ غم کا چاند بنا دیا

یہ علیؑ کے لال کی ہمتیں
یہ سنان و تیر کی دعوتیں
کہیں نوجوان کا جگر دیا
کہیں بے زبان کا گلا دیا

کہو دل کہاں سے وہ لائیں گے
جو حسینؑ خیمے میں جائیں گے
جسے ماں کی گود سے لائے تھے
اُسے زیرِ خاک سُلا دیا

نہ حسینؑ گھوڑے پہ تھم سکے
کہ صدا اذاں کی بلند تھی
وہ نمازِِ عصر کا وقت تھا
کہ زمیں پہ خود کو گرا دیا

چمن آپ اپنا لُٹا گئے
کہ بہارِ دینِ خدا رہے
نہ جما جو رنگ بہار کا
تو لہو بھی اپنا ملا دیا

Ye hidayaton ki jaza mili
Ye inayaton ka sila diya
Wo charagh qabr e Nabi ka tha
Jisay Karbala may bujha diya

Ye Hussain tera hi kaam tha
Ke sab apnay laal fida kiye
Tujhe in sitaron ne doob kar
Shab e gham ka chand banaya diya

Ye Ali ke laal ki himmatain
Ye sinan o teer ki dawatain
Kaheen nojawan ka jigar diya
Kaheen bezaban ka gala diya

Kaho dil kahan se wo layain gay
Jo Hussain kahimay may jayain gay
Jisay maa ki goad se laaye thay
Usay zair e khaak sula diya

Na Hussain ghoray pe tham sakay
Ke sada azaan ki buland thi
Wo namaz e asr ka waqt tha
Ke zameen pe khud ko gira diya

Chaman aap apna luta diya
Ke bahar e deen e Khuda rahay
Na jama jo rang bahar ka
To lahoo bhi apna mila diya