Wa waila sad wa waila
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



وا ویلا صد وا ویلا

کہتے ہیں یہی سب اہل عزا
زہراؑ کا چمن برباد ہوا
وا ویلا صد وا ویلا

مہمان بلا کر سید کو
اِس طرح ستایا امت نے
دریا سے ہٹا کر خیموں کو
پانی پہ لگایا ہے پہرہ
وا ویلا صد وا ویلا

وہ چاند نبی كے گھر کا تھا
کہتے تھے جسے ہمشکلِ نبی
وہ چند گیا بینائی گئی
اس گھر سے اجالا روٹھ گیا
وا ویلا صد وا ویلا

تصویر حسن کا اک بیٹا
فرواؑ كے کلیجے کا ٹُکْڑا
وہ دولہا بنا اور قتل ہوا
زینبؑ نے کہا اے میرے خدا
وا ویلا صد وا ویلا

وہ جس كے علم سے پیاسوں کو
عاشور تلک اِک آس رہی
جب قتل ہوا سقائے حرام
تھی خشک زبانوں پر یہ بکا
وا ویلا صد وا ویلا

دو ہی تو پسر تھے زینبؑ كے
بھائی پہ جنہیں قربان کیا
جب عونؑ و محمدؑ مارے گئے
زینبؑ نے نہیں سرورؑ نے کہا
وا ویلا صد وا ویلا

جس شہزادی کو سورج نے
سر ننگے نہیں دیکھا تھا کبھی
اُس زینبؑ کو دکھلایا گیا
بازارِ ستم دربارِ جفا
وا ویلا صد وا ویلا

قیدی کی طرح سے زینبؑ کو
گلیوں میں لعین لے جاتے تھے
بیمار مسافر بے بس تھا
بس کرتا رہا ہر گام بُکا
وا ویلا صد وا ویلا

مظہر وہ قیامت کا منظر
لفظوں میں بیاں کر سکتا نہیں
آنکھوں سے لہو برساتا ہوا
کانٹوں پہ امامِ وقتؑ چلا
وا ویلا صد وا ویلا

Wa waila sad wa waila

Kehtay hain yehi sab ahle aza
Zehra ka chaman barbad hua
Wa waila sad wa waila

Mehman bula kar Syed ko
Is tarha sataya ummat ne
Darya se hata kar khaimo ko
Pani pe lagaya hay pehra
Wa waila sad wa waila

Wo chand Nabi ke ghar ka tha
Kehtay thay jisay hamshakl e Nabi
Wo chand gaya beenayi gayi
Us ghar se ujala rooth gaya
Wa waila sad wa waila

Tasveer e Hasan ka ik beta
Farwa ke kaleegay ka tukra
Wo dulha bana aur qatl hua
Zainab ne kaha aey meray Khuda
Wa waila sad wa waila

Wo jis ke alam se pyason ko
Ashoor talak ik aas rahi
Jab qatl hua saqqa e haram
Thi khushk zubano par ye buka
Wa waila sad wa waila

Do hi to pisar thay Zainab ke
Bhai pe jinhain qurban kiya
Jab Aon o Muhammad maray gaye
Zainab ne nahi Sarwar ne kaha
Wa waila sad wa waila

Jis shehazadi ko sooraj ne
Sar nangay nahi dekha tha kabhi
Us Zainab ko dikhlaya gaya
Bazar e sitam darbar e jafa
Wa waila sad wa waila

Qaidi ki tarha se Zainab ko
Galyon may laeen le jatay thay
Beemar musafir bebas tha
Bas karta raha har gaam buka
Wa waila sad wa waila

Mazhar wo qayamat ka manzar
Lafzon may bayan kar sakta nahi
Ankhon se lahoo barsata hua
Kanton pe Imam e waqt chala
Wa waila sad wa waila