Ya Hussain kushta e tegh e jafa
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Ya Hussain Ya Hussain Ya Hussain

Ya Hussain kushta e tegh e jafa
Ya Hussain sibt e Rasool e Khuda
Haey sar bar sare naiza tera
Dar badar le gaye baani e jafa
Be dafan laasha e besar hay ghareeb e Zehra
Hay badan ghoron se pamal tera wa waila
Ya Hussain Ya Hussain Ya Hussain

Nainawa dasht e bala Karbala
Kyun hui joar o jafa Karbala
Kia thi pyason ki khata Karbala
Kuch to keh kuch to bata Karbala
Apnay mehman pe ye bandish e pani kyunkar
Jis ki madar ko mehr may mila hoaz e Kausar
Ya Hussain Ya Hussain Ya Hussain

Aik maqtal may bahattar lashay
Bhanjay betay bhateejay pyasay
Para para huay saray aisay
Aik Quran ke paray jaisay
Khaak urr urr shaheedon ka kafan banti thi
Khuld se Fatima Zehra ka sada aati thi
Ya Hussain Ya Hussain Ya Hussain

Ik taraf behta tha darya e Furaat
Ik taraf pyason pe mushkil thi hayaat
Baad e Shabbir aseeron ki wo raat
Kaise guzri tan e sad pash ke sath
Koi bhai ko koi roti thi beton ke liye
Be kasi wo thi ke anson na thay ankhon ke liye
Ya Hussain Ya Hussain Ya Hussain

Tashna lab be watan o be khata
Sar tha sajday may tehe taigh gala
Aik ik zakhm se khoon behta tha
Noha karti theen janab e Zehra
Khaime ke dar pe bahan karti thi faryad o fughan
Jaise sehra may kisi shakhs ki aawaz e azaan
Ya Hussain Ya Hussain Ya Hussain

Mar gaya sher e alamdar e jari
Chal gayi Qasim e mehroo pe churi
Mar gaya dasht may hamshakl e Nabi
Kha ke seenay pe sitam ki barchi
Ghar ka ghar Zainab e mazloom ka barbad hua
Lut gaya shehr e Nabi Karbala aabad hua
Ya Hussain Ya Hussain Ya Hussain

Kat gaye bazoo e saqqa e haram
Chid gayi mashk hua thanda alam
Khaima e sheh may tha barpa matam
Noha kartay thay sabhi Ahle haram
Aey alamdar utho chinti hay Zainab ki rida
Koi baqi na raha Abid e muztar ke siwa

Fatima Zehra ye deti hain dua
Ta qayamt rahay ye farsh e aza
Yunhi aati rahay matam ki sada
Ho har ik lab pe Hussaini noha
Hashr may sheh ke azadaron se pursa loon gi
May azadaron ko jannat ki basharat doon gi
Ya Hussain Ya Hussain Ya Hussain

Kar ke Rehan may likhon Noha
Gham se seena hay mera Karb o bala
Ankh se behta hay khoon ka darya
Kartay hain qalb o jigar bhi girya
Haey wo bekas o mazloom wo be yaar Hussain
Roeen gay hashar talak tujh ko azadar Hussain

یا حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

یا حسینؑ کشتہ تیغِ جفا
یا حسینؑ سبطِ رسولِ خدا
ہائے سر بر سرِ نیزہ تیرا
دَر بدر لے گئے بانیءِ جفا
بے دفن لاشہءِ بے سر ہے غریب زہراؑ
ہے بدن گھوڑوں سے پامال تیرا وا ویلا
یا حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

نینوا، نینوا دشتِ بلا کربلا
کیوں ہوئی جور و جفا کربلا
کیا تھی پیاسوں کی خطا کربلا
کچھ تو کہہ کچھ تو بتا کربلا
اپنے مہمان پہ یہ بندشِ پانی کیونکر
جس کی مادر کو ملا مہر میں حوضِ کوثر
یا حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

ایک مقتل میں بہتر لاشے
بھانجے بیٹے بھتیجے پیاسے
پارا پارا ہوئے سارے ایسے
ایک قرآن كے پارے جیسے
خاک اُڑ اُڑ کے شہیدوں کا کفن بنتی تھی
خلد سے فاطمہ زہراؑ کا صدا آتی تھی
یا حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

اِک طرف بہتا تھا دریائے فرات
اِک طرف پیاسوں پہ مشکل تھی حیات
بعدِ شبیرؑ اسیروں کی وہ رات
کیسے گزری تنِ صد پاش كے ساتھ
کوئی بھائی کو کوئی روتی تھی بیٹںوں كے لیے
بے کسی وہ تھی كے آنسو نہ تھے آنکھوں كے لیے
یا حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

تشنہ لب بے وطن و بے خطا
سر تھا سجدے میں تہہِ تیغ گلا
ایک اِک زخم سے خوں بہتا تھا
نوحہ کرتی تھیں جناب زہراؑ
خیمے كے دَر پہ بہن کرتی تھی فریاد و فغاں
جیسے صحرا میں کسی شخص کی آوازِ اذاں
یا حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

مر گیا شیرِ علمدارِ جری
چل گئی قاسمِ مہرو پہ چھری
مر گیا دشت میں ہمشکلِ نبیؑ
کھا كے سینے پہ ستم کی برچھی
گھر کا گھر زینبِؑ مظلوم کا برباد ہوا
لٹ گیا شہرِ نبیؐ کربلا آباد ہوا
یا حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

کٹ گئے بازوئے سقائے حرم
چھد گئی مشک ہوا ٹھنڈا علم
خیمہءِ شہہؑ میں تھا برپا ماتم
نوحہ کرتے تھے سبھی اہلِ حرم
اے علمدار اٹھو چھنتی ہے زینبؑ کی ردا
کوئی باقی نہ رہا عابدِؑ مضطر كے سوا

فاطمہ زہراؑ یہ دیتی ہیں دعا
تا قیامت رہے یہ فرشِ عزا
یونہی آتی رہے ماتم کی صدا
ہو ہر اِک لب پہ حسینی نوحہ
حشر میں شہہؑ كے عزاداروں سے پُرسہ لوں گی
میں عزاداروں کو جنت کی بشارت دوں گی
یا حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

کر كے ریحان میں لکــھوں نوحہ
غم سے سینہ ہے میرا کرب و بلا
آنکھ سے بہتا ہے خوں کا دریا
کرتے ہیں قلب و جگر بھی گریا
ہائے وہ بیکس و مظلوم وہ بے یار حسینؑ
روئیں گے حشر تلک تجھ کو عزادار حسینؑ