Zainab teray baba ki jabeen khoon se tar hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



زینبؑ تیرے بابا کی جبیں خون میں تر ہے 
حیدرؑ کی علمدارِ حسینی پہ نظر ہے 

زینبؑ كے کھلے سَر پہ ہے حیدرؑ کی نگاہیں 
یاد آنے لگی شام كے بازار کی رہیں 
اکیسویں رمضان کی ہونے کو سحر ہے 

شبیرؑ کی ڈھارس ہے یہ زینبؑ کا بھرم ہے 
رتبہ ہے یہ غازیؑ کا كہ سقائے حرم ہے 
دلبند ہے سرورؑ کا حیدرؑ کا جگر ہے 

سوچو تو مسلمانوں كہ یہ بات بڑی ہے 
حق مانگنے زہرہؑ سرِ دربار کھڑی ہے 
اے غیرت اسلام بتا آج کدھر ہے 

وہ وقت بھی ہو گا كے کوئی پاس نہ ہو گا 
گھر بار لُٹے گا مگر عباسؑ نہ ہو گا 
اور جائے گی بازار اُسے یہ بھی خبر ہے 

اِس غم کی محافظ ہے محب زینبؑ دلگیر 
دُنیا میں جو باقی ہے عزادارئیِ شبیر 
یہ فاطمہ زہرہؑ کی دعاؤں کا اثر ہے

Zainab Tere Baba Ki Jabeen Khoon Mein Tar Hai
Haider Ki Allamdare Hussaini Pe Nazar Hai

Zainab Ke Khulay Sar Pe Hai Haidar Ki Nigahein
Yaad Aanay Lagi Shaam Ke Bazaar Ki Rahein
Ikkisveen Ramzan Ki Honay Ko Saher Hai

Shabbir Ki Dhaaras Hai Yeh Zainab Ka Bharam Hai
Rutba Hai Yeh Ghazi Ka Ke Saqqa-e-Haram Hai
Dilband Hai Sarwar Ka Haidar Ka Jigar Hai

Socho To Musalmaano Ke Yeh Baat Bari Hai
Haq Maangnay Zehra Sar-e-Darbar Khari Hai
Ay Ghairat-e-Islam Bata Aaj Kidhar Hai

Voh Waqt Bhi Hoga Ke Koi Paas Na Hoga
Ghar baar Lutay Ga Magar Abbas Na Hoga
Aur Jaaeygi Bazaar Usay Yeh Bhi Khabar Hai

Iss Ghum Muhafiz Hai Muhib Zainab-e-Dilgeer
Duniya Mein Jo Baqi Hai Azadari-e-Shabbir
Yeh Fatima Zehra Ki Duaon Ka Asar Hai