Ash’hadu Anna Ali un Wali Ullah
Efforts: Samin Zahra



Ash’hadu Anna Ali un Wali Ullah (x2)
Ali (as) (x4) Ya Ali (as) Ya Ali (as) (3)
Haye Ali Haye Ali (x2)

Zahra (sa) say pocho kia hai Ali un Wali Ullah
Iss k liyay Batool (sa) ka do bar ghar jala
Baghdad Sham o Kufa Khurasan o Karbala
Ummat nay Fatima (sa) ko kahan dukh nahi dia
Sub kuch lutaya deen ki hifazat k wastay
Or ab Zahra (sa) ujjar gai hai wallayat k wastay

Darbar may bachanay (x2) gai Fatima Zahra (sa), Ali un Wali Ullah (x6)
Sunta na tha Madinay may Zahra (sa)  ki koi baat
Lay ker Hassan (as)  Hussain (as) ko her subah apnay sath
Ghar ghar pe yad ja k (x2) dilate thee Syeddah, Ali un Wali Ullah (x4)

Gham may Abu Turab k ghut ghut k mer gai
Dar perdah Fatima ki waseeat ye he tu thee
I na wo janazay per (x2) jis nay nahi perha, Ali un Wali Ullah (x4)

Toti hoi theen pasallian dam tha ruka hoa
Tha Syeddah pe jalta hoa der gira hoa
Phir bhi lab e Batool (sa) pe (x2) jari the ye sada, Ali un Wali Ullah (x4)

Zainab (sa) pukari aye meray mazloom bay’watan
Waada tumhari laash pe kerti hai ye behan
Ik din zaror Sham ki (x2) galli’un may gonjay ga, Ali un Wali Ullah (x4)
 
I Najaf say Shaam e Gharibaan may jb Ali (as)
Zainab (sa) ye keh ker apnay pidr say lipt gai
Khanjar talay bhi bhai k (x2) zakhami lab’un pe tha, Ali un Wali Ullah (x4)

Boli Sakina (sa) aya jo zindaan may Shah (as) ka sir
Kaisay bataon Sham ka kaisay kia safr
Gir gir k khoon kaan’un say (x2) deta raha sada, Ali un Wali Ullah (x4)

Zindaan may aik qabr bananay k wastay
Ham’sheer ka janazah uthanay k wastay
Naad e Ali (as) ki shakal may (x2) Sajjad (as) nay perha, Ali un Wali Ullah (x4)

Na’meharm’un ki bheer the darbar e Sham may
Zainab (sa) nay day k khutba zaban e Imam (as) may
Bay’waqt ki azan may (x2) dabnay nahi dia, Ali un Wali Ullah (x4)

Maa ki lehad pe bain Takallum they beti k
Pehlo pe zakham kha k bachaya tha aap (sa) nay
Mai nay rida luta k (x2) bachaya hai ba’khuda, Ali un Wali Ullah (x4)
Haye Ali Haye Ali (x6)

اشھد انا علی ولی اللّٰہ (۲)
علیؑ (۳) یا علیؑ یا علیؑ (۳)
ہائے علیؑ ہائے علیؑ (۲)

زہراؑ سے پوچھو کیا ہے علی ولی اللّٰہ
اِس کے ليے بتولؑ کا دو بار گھر جلا
بغداد شام و کوفہ خراسان و کربلا
اُمّت نے فاطمہؑ کو کہاں دکھ نہيں ديا
سب کچھ لُٹايا ديں کی حفاظت کے واسطے
اور اب زہراؑ اجڑ گئی ہے ولايت کے واسطے

 دربار ميں بچانے (۲) گئيں فاطمہ زہراؑ ، علی ولی اللّٰہ (۴)

سنتا نہ تھا مدينے ميں زہراؑ کی کوئی بات
لے کر حسنؑ حسينؑ کو ہر صبح اپنے ساتھ
گھر گھر پہ ياد جا کے (۲) دلاتی تھی سيدہؑ، علی ولی اللّٰہ (۴)


غم ميں  ابو ترابؑ کے گُھٹ گُھٹ کے مر گئی
در پردہ فاطمہؑ کی وصيت يہی تو تھی
آئے نہ وہ جنازے پر (۲) جس نے نہيں پڑھا، علی ولی اللّٰہ (۴)

ٹوٹی ہوئی تھيں پَسلياں دَم تھا رکا ہوا
تھا سيدہؑ پہ جلتا ہوا دَر گرا ہوا
پھر بھی لبِ بتولؑ پہ (۲) جاری تھی يہ صدا، علی ولی اللّٰہ (۴)

زينبؑ پکاری اے ميرے مظلوم بے وطن
وعدہ تمھاری لاش پہ کرتی ہے یہ بہن
ايک دن ضرور شام کی (۲)  گليوں ميں گونجے گا، علی ولی اللّٰہ (۴)

آئے نجف سے شامِ غريباں ميں جب علیؑ
زينبؑ يہ کَہ کہ اپنے پدر سے لپٹ گئی
خنجر تلے بھی بھائی کے (۲) زخمی لبوں پہ تھا، علی ولی اللّٰہ (۴)

بولی سکينہؑ آيا جو زندان ميں شاہؑ کا سر
کيسے بتاؤں شام کا کيسے کيا سفر
گِر گِر کے خون کانوں سے (۲) ديتا رہا صدا، علی ولی اللّٰہ (۴)

زندان ميں ايک قبر بنانے کے واسطے
ہمشير کا جنازہ اُٹھانے کے واسطے
نادِ علیؑ کی شکل ميں (۲) سجادؑ نے پڑھا، علی ولی اللّٰہ (۴)

نا مَحرموں کی بھيڑ تھی دربارِ شام ميں
زينبؑ نے دے کے خطبہ زبانِ امامؑ ميں
بے وقت کی اذان ميں (۲) دبنے نہيں ديا، علی ولی اللّٰہ (۴)

ماں کی لحد پہ بَين تکلّمؔ تھے بيٹی کے
پہلو پہ زخم کھا کے بچايا تھا آپؑ نے
ميں نے رِدا لُٹا کے (۲) بچايا ہے باخد بچايا، علی ولی اللّٰہ (۴)
ہائے علیؑ ہائے علیؑ (ٓ۳)