Baap K Sir Say Lipt Ker Ye Sakina Boli Ab Mai So Jaun Ge
Efforts: Samin Zahra



بابا ميرے بابا (۲)
اب ميں سو جاؤں گی بابا (۲)
اب ميں سو جاؤں گی، بابا ميرے بابا (۲)
باپ کے سر سے لِپٹ کر يہ سکينہؑ بولی اب ميں سو جاؤں گی (۲)

بند ہو جائیں گی (۲) کچھ دير ميں آنکھيں ميری
اب ميں سو جاؤں گی 
باپ کے سر سے لِپٹ کر يہ سکينہؑ بولی اب ميں سو جاؤں گی

چلتے ناقے سے جو ظالم نے گرايا تھا مجھے
ايک بی بیؑ نے گلے آ کے لگايا تھا مجھے
اپنی آغوش ميں اِک بار سلايا تھا مجھے
ساتھ بابا کے ميرے آئی ہے پھر وہ بی بیؑ، اب ميں سو جاؤں گی
باپ کے سر سے لِپٹ کر يہ سکينہؑ بولی اب ميں سو جاؤں گی

قيد يہ ختم ہے زِندان کی کچھ ديرکے بعد
پاس اصغرؑ کے چلی جاؤں گی کچھ ديرکے بعد
بند ہو جائيں گی آنکھيں ميری کچھ ديرکے بعد
پياسے ہونٹوں سے (۲) سنائيں گے جو بابا لوری، اب ميں سو جاؤں گی
باپ کے سر سے لِپٹ کر يہ سکينہؑ بولی اب ميں سو جاؤں گی

سَر جھکائے ہوئے بے آس کھڑے ہيں امّاں
کربلا والے ميرے پاس کھڑے ہيں امّاں
يہاں اکبرؑ وہاں عباسؑ کھڑے امّاں
آ گئے سب ميں جنھيں ياد کيا کرتی تھی، اب ميں سو جاؤں گی
باپ کے سر سے لِپٹ کر يہ سکينہؑ بولی اب ميں سو جاؤں گی

ماں کی نظروں سے سکينہؑ کو چُھپا لو بھيا
ہاں مجھ کو قرآن، مصائب تو سنا دو بھيا
قِبلہ رو خاک پہ دکھيا کو لِٹا دو بھيا
تم سے وعدہ رہا (۲) دُہراتے ہوئے نادِ علی، اب ميں سو جاؤں گی
باپ کے سر سے لِپٹ کر يہ سکينہؑ بولی اب ميں سو جاؤں گی

پھر نگاہوں ميں ميری تِيروں بھرا ہے لاشہ 
ہاتھ پھيلائے ہوئے ہيں کھڑے ميرے پيارے بابا
گونجتی ہے وہ الہيہ يا بنيّہ کی صدا
آج آواز وہی آتی ہے مقتل والی،  اب ميں سو جاؤں گی
باپ کے سر سے لِپٹ کر يہ سکينہؑ بولی اب ميں سو جاؤں گی

جب سے دربار ميں غُربت کا وہ منظر ديکھا
شاہؑ کی تنہائی نے اِک بھی پَل مجھے سونے نہ ديا
ختم يہ خوف ہوا آج سے اکبر ميرا
کوئی اب بابا کے (۲) ہونٹوں پہ نہ مارے گا چھڑی،  اب ميں سو جاؤں گی
باپ کے سر سے لِپٹ کر يہ سکينہؑ بولی اب ميں سو جاؤں گی

Baba meray Baba (x2) 
Ab mai so jaun ge Baba (x2)
Ab mai so jaun ge, Baba meray Baba (x2)
Baap k sir say lipt ker ye Sakina (sa) boli ab mai so jaun ge (x2)

Band hu ja’een ge (x2) kuch der may aankhain meri
Ab mai so jaon ge
Baap k sir say lipt ker ye Sakina (sa) boli ab mai so jaun ge

Chaltay naaqay say jo zalim nay giraya tha mujhay
Aik Bibi (sa) nay galay aa k lagaya tha mujhay
Apni aaghosh may ik bar sulaya tha mujhay
Sath Baba k meray i hai phir wo Bibi (sa), ab mai so jaun ge
Baap k sir say lipt ker ye Sakina (sa) boli ab mai so jaun ge

Qaid ye khatam hai zindaan ki kuch der k baad
Pass Asghar (as) k chali jaun ge kuch der k baad
Band hu ja’ain ge aankhain meri kuch der k baad
Pyasay hontun say (x2) suna’ain gay jo Baba lori, ab mai so jaun ge
Baap k sir say lipt ker ye Sakina (sa) boli ab mai so jaun ge

Sir jhuka’i hoay be’aas kharay hain amma
Karbala walay meray pass kharay hain amma
Yahan Akbar (as) wahan Abbas (as) kharay amma
Aa gai sub mai jinhain yad kia kerti thee, ab mai so jaun ge
Baap k sir say lipt ker ye Sakina (sa) boli ab mai so jaun ge

Maa ki nazar’un say Sakina (sa) ko chupa lo bhaya
Han mujh ko Quran, masa’ib tu suna du bhaya
Qibla ro khak pay dukhiya ko lita du bhaya
Tum say waada raha (x2) dhuratay hoay Naad e Ali, ab mai so jaun ge
Baap k sir say lipt ker ye Sakina (sa) boli ab mai so jaun ge

Phir nigha’un may meri teer’un bhara hai laasha
Hath phaila’i hoay hain kharay meray pyaray Baba
Gunjti hai wo Elahia ya buniyya ki sada
Aaj awaz wohe aati hai maqtal wali, ab mai so jaun ge
Baap k sir say lipt ker ye Sakina (sa) boli ab mai so jaun ge

Jub say derbar may ghurbat ka wo manzar dekha
Shah ki tanhi nay ik bhi pal mujay sonay na dia
Khatam ye khauf hua aaj say Akbar mera
Koi ab Baba k (x2) hontun pay na maray ga chari, ab mai so jaun ge
Baap k sir say lipt ker ye Sakina (sa) boli ab mai so jaun ge