Meray Hussain lipt ke Shah say kehti hay Fatima ro ke
Efforts: Samin Zahra



Merya Hussain (as)
Lipt k Shah (as) say kehti hai Fatima (sa) ro k
Meray Hussain (as) Han Meray Hussain (as)
Mai kitnay teer nikaal’un tum ko chain milay (2)

Bata Hussain (as) zayada hai dird kis jah per
K Maa nikal le wo teer Ya Ali (as) keh ker
Tarapna dekha nahi jata ab tu Maadar say
Meray Hussain (as) Meray Hussain (as)
Mai kitnay teer nikaal’un tum ko chain milay

Wo jis ko pyar say athara saal pala hai
Usi k senay pay zalim nay neza mara hai
Jawan k senay say khenchi hai khud sina tu nay
Meray Hussain (as) Meray Hussain (as)
Mai kitnay teer nikaal’un tum ko chain milay 

Na hath pehlo say utha na tham sakay aanso
Tumhay tu yad hai zakhmi hoa mera pehlo
Chupa na pao gay pehlo ka dird ab Maa say
Meray Hussain (as) Meray Hussain (as)
Mai kitnay teer nikaalun tum ko chain milay

Tumhay rakha hai sada apni chaon may mai nay
Bala ki dhop hai maqtal may aye meray bachay
Tumhari laash pe saya kerun ge baal’un say
Meray Hussain (as) Meray Hussain (as)
Mai kitnay teer nikaalun tum ko chain milay

Qaza nay tujh say mujay kam’sini may cheen lia
Zamana hu gaya tujh say milay hoay beta
Laga lun phir tujhay senay ko muj ko chain milay
Meray Hussain (as) Meray Hussain (as)
Mai kitnay teer nikaalun tum ko chain milay

Naseeb tak na hoa jalti khaak ka bister
Dam e akheer tumhara badan hai teer’un per
Tumhay yeh teer tarap’nay talak nahi detay
Meray Hussain (as) Meray Hussain (as)
Mai kitnay teer nikaalun tum ko chain milay

Hussain (as) bolay Mubarak ye maa say rotay hoay
Aye Maa nikaal lu bus teer meray pehlo say
Jabeen hu sajday may jis waqt mera dam nikalay
Aye meri Maa Aye meri Maa

ميرے حسينؑ
لِپٹ کہ شاہ سے کہتی ہے فاطمہؑ رو کے
ميرے حسينؑ ہاں ميرے حسينؑ
ميں کتنے تِير نکالوں تم کو چَين ملے (۲)

بتا حسينؑ زيادہ ہے درد کس جاہ پر
کہ ماں نکال لے وہ تير يا علیؑ کہ کر
تڑپنا ديکھا نہيں جاتا اب تو مادر سے
ميرے حسينؑ ميرے حسينؑ
ميں کتنے تِير نکالوں تم کو چَين ملے

وہ جس کو پيار سے اٹھارہ سال پالا ہے
اُسی کے سينے پہ ظالم نے نيزہ مارا ہے
جواں کے سينے سے کھينچی ہے خود سِناں تو نے
ميرے حسينؑ ميرے حسينؑ
ميں کتنے تِير نکالوں تم کو چَين ملے

نہ ہاتھ پہلو سے اُٹھا نہ تھم سکے آنسو
تمھيں تو ياد ہے زخمی ہوا ميرا پہلو
چُھپا نہ پاؤ گے پہلو کا درد اب ماں سے
ميرے حسينؑ ميرے حسينؑ
ميں کتنے تِير نکالوں تم کو چَين ملے

تمھيں رکھا ہے سدا اپنی چھاؤں ميں مَيں نے
بَلا کی دھوپ ہے مقتل ميں اے ميرے بچّے
تمھاری لاش پہ سايہ کروں گی بالوں سے
ميرے حسينؑ ميرے حسينؑ
ميں کتنے تِير نکالوں تم کو چَين ملے

قضا نے تجھ سے مجھے کمسِنی ميں چھين ليا
زمانہ ہو گيا تجھ سے ملے ہوئے بيٹا
لگا لوں پھر تجھے سينے کو مجھ کو چَين ملے
ميرے حسينؑ ميرے حسينؑ
ميں کتنے تِير نکالوں تم کو چَين ملے

نصيب تک نہ ہوا جلتی خاک کا بِستر
دمِ اخير تمھارا بدن ہے تيروں پر
تمھيں یہ تير تڑپنے تَلک نہيں ديتے
ميرے حسينؑ ميرے حسينؑ
ميں کتنے تِير نکالوں تم کو چَين ملے

حسينؑ بولے مبارک يہ ماں سے روتے ہوئے
اے ماں نکال لو بس تِير ميرے پہلوسے
جبيں ہو سجدے ميں جس وقت ميرا دَم نکلے
اے ميری ماں اے ميری ماں