Lo mil gayi zindan se Sakina ko rehai
Efforts: Samin Zahra



Inna Lillah e Wa Inna Elahi Ra’ji’oon

Lo mil gai zindaan say Sakina (sa) ko rahai (2)
Sajjad (as) nay ye kehtay hoay laash uthai
Lo mil gai zindaan say Sakina (sa) ko rahai (2)

Baba chalay aao k mai ten’ha hun yahan per
Bus itna bata jao k dafna’un kahan pr
Kia qaid may he dafn keray behan ko bhai
Lo mil gai zindaan say Sakina (sa) ko rahai (2)

Ghar janay ki hasrat tu baraber na hoi per
Dam tot gaya hu gai azad tu dukhtar
Maa beti ka mun chom k deti the duhai
Lo mil gai zindaan say Sakina (sa) ko rahai (2)

Ab shimr tamanchay na isay mar sakay ga
Araam say soay ge tahay khak ye dukhiya
Laashay say ye he kehti rahi Fatima jai (sa)
Lo mil gai zindaan say Sakina (sa) ko rahai (2)

Bhai nay zameen khod k jb qabr sanwaari
Rotay hoay mayyat samet turbat jo utari
Zindaan ki dewaarun say awaz ye i
Lo mil gai zindaan say Sakina (sa) ko rahai (2)

Band aankhain kiay qabr may araam keray ge
Maa shana hilatai rahay phir bhi na uthay ge
Yun maut nay lori hai Sakina (sa) ko sunai
Lo mil gai zindaan say Sakina (sa) ko rahai (2)

Abid pe takallum wo musebat ki ghari the
Jin haathun may kheli the wo masoom c bachi
Un haathun nay turbat bhi Sakina (sa) ki bnai
Lo mil gai zindaan say Sakina (sa) ko rahai (2)

انّا للّٰہ و انّا الہيہ راجعون

لو مل گئ زنداں سے سکينہؑ کو رہائی (۲)۔
سجادؑ نے یہ کہتے ہوئے لاش اٹھائی
لو مل گئ زنداں سے سکينہؑ کو رہائی (۲)۔

بابا چلے آؤ کہ ميں تنہا ہوں يہاں پر
بس اتنا بتا جاؤ کہ دفناؤں کہاں پر
کيا قيد ميں ہی دفن کرے بہن کو بھائی
لو مل گئ زنداں سے سکينہؑ کو رہائی (۲)۔

گھر جانے کی حسرت تو برابر نہ ہوئی پر
دَم ٹوٹ گيا ہو گئ آزاد تو دُختر
ماں بيٹی کا منہ چوم کہ ديتی تھی دُہائی
لو مل گئ زنداں سے سکينہؑ کو رہائی (۲)۔

اَب شِمر طمانچے نہ اِسے مار سکے گا
آرام سے سوئے گی تہِ خاک یہ دُکھيا
لاشے سے يہ ہی کہتی رہی فاطمہ جائیؑ
لو مل گئ زنداں سے سکينہؑ کو رہائی (۲)۔

بھائی نے زمين کھود کہ جب قبر سنواری
روتے ہوئےميّت سميت تُربت جو اتاری
زندان کی ديواروں سے آواز يہ آئی
لو مل گئ زنداں سے سکينہؑ کو رہائی (۲)۔

بند آنکھيں کيے قبر ميں آرام کرے گی
ماں شانہ ہلاتی رہے پھر بھی نہ اُٹھے گی
يوں موت نے لُوری ہے سکينہؑ کو سنائی
لو مل گئ زنداں سے سکينہؑ کو رہائی (۲)۔

عابد پہ تکلّم وہ مصيبت کی گھڑی تھی
جن ہاتھوں ميں کھيلی تھی وہ معصوم سی بچی
اُن ہاتھوں نے تُربت بھی سکينہؑ کی بنائی
لو مل گئ زنداں سے سکينہؑ کو رہائی (۲)۔