Akbar ne kaha ro kar aey dard zara tham ja
Efforts: Samin Zahra



Shabih Imam e Zama(as) khenchtay hain
Tasavar may tasveer e jan khenchtay hain
Shabih Imam e Zama(as)

Kaha ro ke Akbar(as) nay aey dard tham ja 
ke senay say Baba sina khenchtay hain
Shabih Imam e Zama(as)

Akbar(as) nay kaha ro ker aey dard zara tham ja
Baba meray senay say sina khench rahay hain (x2)

Aey behtay lahu ruk ja (x2) 
Hai wasta Sughra(sa) ka
Baba meray senay say sina khench rahay hain
Akbar(as) nay kaha

Patti meray Baba nay aankhun pe nahi bandhi
De hai khulay haathun say run may meri qurbani
Ai Waris Khalil aao hai waqt qayamat ka
Baba meray senay say sina khench rahay hain
Akbar(as) nay kaha

Yasrab ki tarf aankhain her dam meri rehti hain
Ab waqt bohat kam hai sansain bhi ulajhti hain
Qasid meri Sughra(sa) k jaldi say zara a ja
Baba meray senay say sina khench rahay hain
Akbar(as) nay kaha

Akbar(as) ki guzarish hai Lillah na rad kerna
Jub Aap ka sheva hai dunya ki madad kerna
Baba ki madad kernay a jaiyay aey Dada
Baba meray senay say sina khench rahay hain
Akbar(as) nay kaha

Dekha nahi jai ga aankhun say kbhi meri
Tarpun ga ager mai tu taklif Unhay hu ge
Ulfat ka taqaza hai larzay na badan mera
Baba meray senay say sina khench rahay hain
Akbar(as) nay kaha

Arman jo dil may hai dil may he na dafna dein
Aisay na hu Zainab (s.a) ko ja ker koi batla day
Pyari Phupi Amman say berdasht na ye hu ga
Baba meray senay say sina khench rahay hain
Akbar(as) nay kaha

Marney ka nahi hai gham Gham hai tu bus itna hay
Darwazay pay muddat say baithi hui Sughra(sa) hay
Sun ker ye khabar shaid mer jai ge Wo dukhiya
Baba meray senay say sina khench rahay hain
Akbar(as) nay kaha

Kehta tha takallum wo himmat jo meri huti
Khud apnay he haathun say mai khenchta ye barchi
Taklif nahi apni hai dird mujhe is ka
Baba meray senay say sina khench rahay hain
Akbar(as) nay kaha

شبيہ امام زماںؑ کھينچتے ہيں
تصّور ميں تصويرِ جاں کھينچتے ہيں
شبيہ امامؑ

کہا رو کہ اکبرؑ نے اے درد تھم جا
 کہ سينے سے بابا سناں کھينچتے ہيں
شبيہ امامؑ

(2x) اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہي


(2x) اے بہتے لہو رک جا 
ہے واسطہ صغریٰؑ کا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں
اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں

پٹی ميرے بابا نے آنکھوں پہ نہيں باندھی
دی ہے کھلے ہاتھوں سے رن ميں ميری قربانی
اے وارثِ خليل آوُ ہے وقت قيامت کا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں
اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں

يثرب کی طرف آنکھيں ہر دم ميری رہتی ہيں
اب وقت بہت کم ہے سانسيں بھی الجھتی ہيں
قاصد ميری صغریٰؑ کے جلدی سے ذرا آ جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں
اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں

اکبرؑ کی گزارش ہے للّٰہ نہ رد کرنا
جب آپؑ کا شيوہ ہے دنيا کی مدد کرنا
بابا کي مدد کرنے آ جائيے اے دادا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں
اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں

ديکھا نہيں جائے گا آنکھوں سے کبھی ميری
تڑپوں گا اگر ميں تو تکليف اانھيں ھو گی
اُلفت کا تقاضا ہے لرزے نہ بدن ميرا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں
اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں

ارمان جو دل ميں ہے دل ميں ہی نہ دفنا ديں
ايسا نہ ہو زينبؐ کو جا کر کوئی بتلا دے
پياری پھپی امّاں سے برداشت نہ يہ ھو گا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں
اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں


مرنے کا نہيں ہے غم, غم ہے تو بس اتنا ہے
دروازے پہ مدّت سے بيٹھی ہوئی صغریٰؑ ہے
سن کر يہ خبر شائد مر جائے گی وہ دکھيا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں
اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں

کہتا تھا تکلّم وہ ہمّت جو ميری ہوتی
خود اپنے ہی ہاتھوں سے ميں کھينچتا يہ برچھی
تکليف نہيں اپنی ہے درد مجھے اس کا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں
اکبرؑ نے کہا رو کر اے درد ذرا تھم جا
بابا ميرے سينے سے  سناں کھينچ رہے ہيں