Jab ho ke reha qaid say
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Jab ho ker reha qaid se ghar jaayegi Zainab.

Gar tum na hue sath to, mar jaegi Zainab.

1) Acha mai chali janibay, Zindaan mere bhaia.
Karti hui matam tera, Parhti hui nauha.
Seene pe liye zakhm-e, Jigar jaegi Zainab.

2) Tum qatl hue aur, Ajal mujhko na aayi.
Kis tarhan mai zindan hoon, Na poocho mere bhai.
Dhoondegi tumhe ab to, Jidhar jaaegi Zainab

3) Bahi tere mazloomi ki, Kahti hoon qasam mai
Bahr dar e zinda say, Na rahkoon gi qadam mai.
Jab tak na fana zulm ko, kar jahe gi Zainab.

5) Pegham zamanay mai, Tera naam karon gi.
Bahi tere Qatil ka, Ton anjaam karoon gi.
Sar tann se joda Shimr ka, Kar jaaegi Zainab.

6) Jee khol ker Bhai mai, Tujhe roo nahi paayi.
Afsos teri laash pay, Mai nange sarr ayi.
Maloom nahi yahan se, Kidhar jaaegi Zainab.

7) Soogat mai yeh khoon barah, Kurtah tere Bahi.
Kahdoon gi yeh saman, Bacha kar hoon mai lahi
Roze pay Muhammed, Agar jaaegi Zainab.

8) Sharminda hoon mai, tumhko kafan deti to Kaisay.
Bah azane rida cheen li, Bhaiya mere sirr se.
Is ranjh mein duniya se, guzar jaaegi Zainab.

جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب

آغوش کے پالوں کو کہاں پائے گی زینب
گھبرائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب

بن بھائی کے ویران نظر آئے گا مدینہ
ہو گا یہ خرینہ
پوچھے گی یہ صغرہ تو تڑپ جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب

چھائے گی روضے پہ محمد:saw: کے اداسی
روئے گی نواسی
اشکوں میں لہو قلب کا برسائے گی زینب
گھبرائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب

کیا دل پہ گزر جائے گی اپنے ہی مکان میں
اور آہ و فغاں میں
سنسان جو بیٹیوں کی جگہ پائے گی زینب
گھبرائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب

برچھی لگی سنے پہ لگا تیر گلے پر
برباد ہوا گھر
اب اکبر و اصغر کو کہاں پائےگی زینب
گھبرائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب

بے چینیاں بڑھ جائے گی ہو جائے گی مضتر
یاد آئیں گے اصغر
پانی کہیں تھوڑا سا اگر پائے گی زینب
گھبرائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب

ویران نظر آئے گا مکان کا ہر ایک حجرہ
شق ہو گا کلیجہ
اکبر سے بھتیجے کو کہاں پائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب

آغوش کے پالوں کو کہاں پائے گی زینب
گھبرائے گی زینب
جب ہو کے رہا قید سے گھر جائے گی زینب
گھبرائے گی زینب