Teda Seena Nahi Labda
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



ہِن اوکھے سفر یتیمی دے
بابا میں بہوں زخمی آں
تینڈا سینہ میکوں نئیں مِلدا
بدھی مٹیاں تے سمدھی آں

میکوں گِھن ونج بابا نال اپنے
اِس زندگی توں تھک پئی آں
مینڈے وانگ یتیم نہ کوئی ہووے
اے روز دعا منگدی آں

تینڈا سینہ نئیں لبھدا, بابا میں رُل گئی آں 
اِنج لتھے ہوئے دُر مینڈے (2) تیکوں رونڑا بُھل گئی آں

بابا میکوں شام دے لوکاں نے، تینڈے بعد کنیزی وچ منگیا 
میں غیرت سیداں دی (2) اوں ویلے مرگئی آں

جداں گل تیرے ضرباں چلیاں، میں کول کھلو كے ڈینڈی رئی
نہیں ملیا سر تینڈا (2) ترلے کردی رئی آں 

جداں وَکھری قید دا حکم ہویا، میکوں کلیا تنگ زندان دے وچ 
اِنج روندی میں ٹریاں (2) ہو قیدنڑ میں رل گئی آں

دِتا پہلا پرْسَہ مقتل وچ، میکوں شمر لعیں یتیمی دا 
اِنج ظالم ہتھ چایا (2) ہو میں خاک تے جھنڑ پئی آں

جداں داخلا ہویا شام دے وچ، ہوئی بھیڑ بازاری لوکاں دی 
پھپھیاں دے ٹرن کیتے (2) ہو میں راہ منگدی رئی آں 

تینڈے خون اِچ تر خط ظالم نے، میکوں اَجر رسالت ڈھیندے رئے 
اِنج خمس میکوں ملیا (2) ہو رنگین ہویاں زلفاں

شالا کوئی دھی نہ انج گزرے، بے سر بابے دی لاش اتوں 
جیو میں رسیاں پا کے (2) ہو تینڈی لاش توں گزری آں

تیرا سینہ نہیں ملتا     بابا میں رُل گئی آں
یوں نوچے ہیں دُر میرے  تجھے رونا بھول گئی آں

بابا مجھے شام کے لوگوں نے   تیرے بعد کنیزی میں مانگا
میں غیرت سیّدوں کی   اُس وقت ہی مر گئی آں

جب تیرے گلے پر ضرب چلی  میں ساتھ کھڑی بس دیکھتی رہی
نہیں سر تِرا مجھکو دیا        منتیاں کرتی رئی آں

جب تنہا قید کا حکم ہوا   مجھے لے گئے تنگ زندانوں میں
میں روتی یوں رہ گئی         میں قید میں مر گئی ہاں

دیا پہلا پرسہ مقتل میں    مجھے شمر لعیں نے یتیمی کا
یوں ظلم کا ہاتھ اُٹھا     ہو میں خاک پہ گر گئی آں

جب شام میں داخلہ ہونے لگا   ہوئی بھیڑ بازاری لوگوں کی
پھپیوں کے چلنے کو       میں مانگتی راہ رہی ہاں

تیرے خوں میں تر خط ظالم کے   مجھے اجرِ رسالت دیتے رئے
یوں خُمُس ملا مجھکو        ہو رنگین ہوئی زُلفاں

کبھی کوئی بیٹی نہ گزرے  بے سر بابے کے لاشے سے
جِیِسے میں گزری بابا       رسیوں میں جکڑی  ہاں