Musafiran e museebat watan mein atay hain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Musafirane Musibat Watan may Aate hain

Na mehmil hai na haudaj hai
Na lashkar ki wo saj dhaj hai
Na sar pe Alam na chadar hai
Allah ye kesa manzar hai

Musafiran e musibat watan me Aatey hain
Musafiran e musibat watan me Aatey hain

1) Safar se Aatey hain soghat e dard latey hain
   Musafiran e musibat watan me Aatey hain (x2)
   Ya salam Mohammad saww ke Aastaney ko
   Kata ke ayen hain Zehra sa ke sb gharaney ko
   Na kar qabul tu hum be kason k aney ko
   Ye noha krte hain or ashq e khoon bahate hain
   Musafiran e musibat watan me Aatey hain (x2)

2) Madina hum tere wali ko ayen hain kho kar
   Madina koofe me sar nange hum phire dar dar
   Madina daag e rasan hain hamare shano par
   Utha ke hath Madine ko ye sunate hain
   Musafiran e musibat watan me Aatey hain (x2)

3) Har ek qadam hai buka kb labon pe bain nhi
   Hum aye zinda ba zehra sa ka noor e ain nhi
   Madina Akbar o Qasim nhi Hussain nhi
   Ye kese kese jawan the jo yad atey hain
   Musafiran e musibat watan me Aatey hain (x2)

4) Madine walon kaho us behn ki kya taqdeer
   Jo dekhe apne baradr k halq pr shamsheer
   Laho me garq to dekhe Hussain as ki tasweer
   Laho me kya yunhi bhai ka sar dikhate hain
   Musafiran e Musibat watan me Aatey hain (x2)

5) Batao kehte hain kya sb us ammajai ko
   Jo Arbaein talak de kafan na bhai ko
   Behn dikhaye gi munh kis tarah khudai ko
   Kafan diya hai na un ki lehad banatey hain
   Musafiran e Musibat watan me Aatey hain (x2)

6) Chala basheer ye deta hua khabr har jaa
   Magar mahala e Hashim pe dekhta hai kya
   K ek mariza sar e raah hai khari tanha
   Hai muntazir k wo qunbe k log atey hain
   Musafiran e Musibat watan me Aatey hain (x2)

7) Khabr ye pheli to matam har ek ghar me hua
   Nikal nikal pari sb Aurtein barhena paka
   Giri zameen pe sugra sa k us pe charkh gira
   Jo sogwar hain sugra sa k pass Aatey hain
   Musafiran e Musibat watan me Aatey hain (x2)

8) Fiza e dard me lekr udaasiyan ayein
   Safar se lut k idhar bhooki pyasiyan ayein
   Utho rasool saww tumhari nawasiyan ayein
   Aye khud ko unton se ahle harm as giratey hain
   Musafiran e Musibat watan me Aatey hain (x2)

9) Jo ayi kaan me awaaz e fanu e muztar
   Kahan ho aey mere wali Imam e jin o bashar as
   Tarap k reh gai sugra sa bapa hua mehshar
   Kabeer bas ab falaq thartharate hain
   Musafiran e Musibat watan me Aatey hain (x2)

نہ  محمل  ہے  نہ  ہودج  ہے 
نہ  لشکر  کی  وہ  سج  دھج  ہے 
نہ  سر  پہ  علم  نہ  چادر  ہے 
اللہ  یہ  کیسا  منظر  ہے

مسافرانِ  مصیبت  وطن  میں  آتے  ہیں  

سفر  سے  آتے  ہیں  سوغاتِ  درد  لاتے  ہیں

مسافرانِ  مصیبت  وطن  میں  آتے  ہیں  

کیا  سلام  محمدؐ  کے  آستانے  کو 
کٹا  کے  آئے  ہیں  زہراؑ  کے  سب  گھرانے  کو 
نہ  کر  قبول  تو  ہم  بیکسوں  کے  آنے  کو 
یہ  نوحہ  کرتے  ہیں  اور  اشکِ  خوں  بہاتے  ہیں

مدینہ  ہم  تیرے  والی  کو  آئے  ہیں  کھو  کر 
مدینہ  کوفے  میں  سر  ننگے  ہم  پھرے  دردر 
مدینہ  داغِ  رسن  ہے  ہمارے  شانوں  پر 
اٹھا  کے  ہاتھ  مدینے  کو  یہ  سناتے  ہے 

ہر  ایک  قدم  ہے  بکا  کب  لبوں  پہ  بین  نہیں 
ہم  آئے  زندہ  پاں  زہراؑ  کا  نور  عین  نہیں 
مدینہ  اکبرؑ  و  قاسمؑ  نہیں  حسینؑ  نہیں 
یہ  کیسے  کیسے  جواں  تھے  جو  یاد  آتے  ہیں 

مدینے  والوں  کہو  اس  بہن  کی  کیا  تقدیر 
جو  دیکھے  اپنے  بردار  کے  حلق  پر  شمشیر 
لہو  میں  غرق  جو  دیکھے  حسینؑ  کی  تصویر 
لہو  میں  کیا  یوں  ہی  بھائی  کا  سر  دکھاتے  ہیں 

بتاؤ  کہتے  ہیں  کیا  سب  اس  امّاں  جائی  کو 
جو  اربعین  تلک  دے  کفن  نہ  بھائی  کو 
بہن  دکھائے  گی  منہ  کس  طرح  خدائی  کو 
کفن  دیا  ہے  نہ  اُن  کی  لحد  بناتے  ہیں 

چلا  بشیر  یہ  دیتا  ہوا  خبر  ہر  جا
مگر  محلہ  ءِ  ہاشم  میں  دیکھتا  ہے  کیا 
کے  اک  مریضہ  سرِ  راہ  ہے  کھڑی  تنہا 
ہے  منتظر  کہ  وہ  کنبے  کے  لوگ  آتے  ہیں 

خبر  یہ  پھیلی  تو  ماتم  ہر  ایک  گھر  میں  ہوا 
نکل  نکل  پڑیں  سب  عورتیں  برہنہ  پا 
گری  زمین  پہ  صغراؑ  کے  اس  پہ  چرخ  گرا 
کہ  سوگوار  ہیں  صغراؑ  کے  پاس  آتے  ہیں 

فضائے  درد  میں لے  کر  اداسیاں  آئیں
سفر  سے  لٹ  کے  ادھر  بھوکی  پیاسیاں  آئیں 
اٹھو  رسول  تمہاری  نواسیاں  آئیں 
کہ  خود  کو  اونٹوں  سے  اہلِ  حرام  گراتے  ہیں 

جو  آئی  کان  میں  آوازِ  بانُوئے  مضطر 
کہاں  ہو  اے  میرے  والی  امامِ  جن  و  بشر 
تڑپ  کے  رہ  گئی  صغراؑ  بپا  ہوا  محشر 
کبیر  بس  کے  اب  افلاق  تھرتھراتے  ہیں