Aur phir Shaam aa gaya
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



کرب و بلا سے لوٹ كے آیا جو قافلہ
قبرِ نبیؐ پہ ماتمِ شبیرؑ جب ہوا
زینبؑ نے بال کھولے نبیؐ كے مزار پر
بولی لٹا كے آئی ہوں جنگل میں سارا گھر
ارے نانا
میں روتی رہی میرا گھر اجڑا تیرا دین بچا نانا
لیکن میرے حسینؑ نے وعدہ نبھا دیا

حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

نانا تیرے شہر سے چلا
زہرہؑ کا لاڈلا دین كے کام آ گیا
سالارِ قافلہ بن گیا بیمار ناتواں
اور پِھر شام آ گیا

راہوں كے سنگ ریزوں نے پُرسہ دیا اُسے
ہائے نانا شام والوں نے باغی کہا اُسے
اے دین كے بادشاہ تیرے اُس مظلوم لال پر
یہ بھی الزام آ گیا
اور پِھر شام آ گیا
نانا تیرے شہر سے . . . .

اے نانا بازوؤں میں جب باندھی گئی رسن
میں رو پڑی تو نیزے سے بولے شہہؑ زمن
اے بہنا غم سہو ہر گھڑی امت كے واسطے
سُن كے آرام آ گیا
اور پِھر شام آ گیا
نانا تیرے شہر سے . . . .

نانا بتاؤں کیسے میں کیا ہو گئے ستم
کوفے كے در پہ جیسے ہی پہنچے اسیرِ غم
عابدؑ كے لب ہلے دیکھ کر مسلمؑ کی لاش کو
لب پہ الشّام آ گیا
اور پِھر شام آ گیا
نانا تیرے شہر سے . . . .

واں اک یہودی رہتا تھا بہیا تھا جس کا نام
وہ کلمہ پڑھ كے چادریں لے آیا خوش خرام
پِھر چادریں چھنیں پِھر وہی بے حرمتی ہوئی
صبر پِھر کام آ گیا
اور پِھر شام آ گیا
نانا تیرے شہر سے . . . .

کوفے میں ہم جو آ گئے بے پردہ نوحہ گر
کہتا تھا کوفے والوں سے یہ شمر بد گہر
حاکم کو دو خبر لایا ہوں نیزوں پہ سب كے سر
لینے انعام آ گیا
اور پِھر شام آ گیا
نانا تیرے شہر سے . . . .

عابدؑ کو آ كے خولی نے غم کی خبر یہ دی
حاکم كے سامنے ابھی پیشی ہے آپ کی
نانا یہ سانحہ آپ كے سادات كے لیے
بن كے کُہرام آ گیا
اور پِھر شام آ گیا
نانا تیرے شہر سے . . . .

بے غیرتوں كے شہر میں سادات آ گئے
پہنچے جو دِل کو تھام كے حاکم كے سامنے
اے نانا اس گھڑی ایک اک بی بی كے ذہن میں
تیرا زرغام آ گیا
اور پِھر شام آ گیا
نانا تیرے شہر سے . . . .

وہ باتیں لکھ سکا ہی نہیں مظہر عابدی
جو کہہ رہی تھی نانا سے بیٹی بتولؑ کی
اے نانا میرے درد کا عرفان ہے جسے
ارے آنسو نہ رک سکیں گے کبھی اُس کی آنکھ سے

جب شام پوحونچا قافلہ - ہے ہے ہے
سادات میں کہرام تھا - ہے ہے
پتھر بھی لگے ، سو زخم سہے
دُرّے لگے ، تنے سہے
سب ہنستے رہے ، ہَم روتے رہے
بس ہائے حسیناؑ کہتے رہے
حسینؑ یا حسینؑ یا حسینؑ

Karb o bala se loat ke aaya jo qafla
Qabr e Nabi pe matam e Shabbir jab hua
Zainab ne baal kholay Nabi ke mazaar par
Boli luta ke aayi hoon jangal may saara ghar
Aray Nana
May roti rahi mera ghar ujrra tera deen bacha Nana
Laikin meray Hussain ne waada nibha diya

Hussain ya Hussain ya Hussain (x3)

Nana teray sheher se chala
Zehra ka laadla Deen ke kaam aa gaya
Salaar e qafla ban gaya beemar natawan
Aur phir Shaam aa gaya

Raahon ke sangrezon ne pursa diya usay
Haey Nana Shaam walon ne baaghi kaha usay
Aey deen ke badshah teray is mazloom laal par
Ye bhi ilzaam aa gaya
Aur phir Shaam aa gaya
Nana teray sheher se....

Aey Nana baazuon may jab baandhi gayi rasan
May ro parhi to naize se bolay Shah e zaman
Aey behna gham saho har gharhi ummat ke wastay
Sun ke aaram aa gaya
Aur phir Shaam aa gaya
Nana teray sheher se....

Nana bataoon kaise may kiya ho gaye sitam
Kufay ke dar pe jaise hi pohonchay aseer e gham
Abid ke lab hilay dekh kar Muslim ki laash ko
Lab pe Ash-Shaam aa gaya
Aur phir Shaam aa gaya
Nana teray sheher se....

Waan ik Yahoodi rehta tha Bahya tha jis ka naam
Wo kalma parrh ke chaadarain le aaya khush kharam
Phir chadarain chini phir wohi behurmati hui
Sabr phir kaam aa gaya
Aur phir Shaam aa gaya
Nana teray sheher se....

Koofay may ham jo aa gaye beparda noha gar
Kehta tha Koofay walon se ye shimr e bad gohar
Hakim ko do khabar laya hoon naizon pe sab ke sar
Lenay in-aam aa gaya
Aur phir Shaam aa gaya
Nana teray sheher se....

Abid ko aa ke Khooli ne gham ki khabar ye di
Hakim ke samnay abhi peshi hay aap ki
Nana ye saneha aap ke sadaat ke liye
Ban ke kohraam aa gaya
Aur phir Shaam aa gaya
Nana teray sheher se....

Beghairaton ke shahr may sadaat aa gayay
Pohonchay jo dil ko thaam ke haakim ke saamnay
Aey Nana us gharri aik ik bibi ke zehn may
Tera zarghaam aa gaya
Aur phir Shaam aa gaya
Nana teray sheher se....

Wo batain likh saka hi nahi Mazhar Abidi
Jo keh rahi thi Nana se beti Batool ki
Aey Nana meray dard ka Irfan hay jisay
Aray ansoo na ruk sakain gay kabhi us ki ankh se

Jab Shaam pohoncha qafila - haey haey haey
Sadaat may kohraam tha - haey haey
Pathar bhi lagay, sau zakhm sahay
durray lagay, tanay sahay
Sab hanstay rahay, ham rotay rahay
Bas haey Hussaina kehtay rahay
Hussain ya Hussain ya Hussain (x3)