Aaram kahan haye haye aaram kahan
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



آرام کہاں ہائے ہائے آرام کہاں
کشتِ آلام میں زینبؑ کو بھلا، آرام کہاں

قتل شبیرؑ بھی عباسؑ بھی اکبرؑ بھی ہوئے
کٹ گئے عونؑ و محمدؑ کے بھی مقتل میں گلے
لاشئہ ابنِ حسنؑ ہو گیا پامالِ جفا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

تیر جب اصغرِؑ معصوم کی گردن پہ لگا
دیتی تھی خیمے کے در پہ کھڑی بانو یہ صدا
بن تیرے چین ملے کیسے میرے ماہ لقا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

چھِد گئی مشکِ سکینہؑ لبِ دریا افسوس
بے کفن خاک پہ ہے شیر کا لاشہ افسوس
پیاسے بچوں کا کوئی چاہنے والا نہ رہا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

چھِن گئی سر سے ردا جل گیا اسباب تمام
بعدِ شبیرؑ نمودار ہوئی کیسی یہ شام
خون کانوں سے بہا بچی کا دامن بھی جلا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

سر شہیدوں کے سرِ نوکِ سِناں قید حرم
اک دو کا نہیں سینے میں بہتر کا ہے غم
بیڑیاں پہنے ہوئے لاغر و بیمار چلا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

کوئی مارا گیا تلوار سے نیزے سے کوئی
لاش مقتل میں کسی دولہا کی پامال ہوئی
ہو گئے بازوئے عباسِؑ علمدار جُدا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

رورو کہتی ہے سکینہؑ میرے عموں آؤ
مجھکو ماریں نہ لعیں آ کے انہیں سمجھاؤ
کیوں نہیں سُنتے ہو دیتی ہوں تمہیں کب سے صدا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

قافلہ جاتا ہے اب شام کے بازاروں میں
چلتے ہیں اہلِ حرم ظلم کے انگاروں میں
ہر قدم ہوتی ہے بیمار پر اِک تازہ جفا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

بچے جو خاک پہ گرتے ہیں کُچل جاتے ہیں
غم سے دل ماؤں کے سینے سے نکل جاتے ہیں
کوئی سُنتا نہیں بیواؤں کی فریاد و بُکا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

آنکھ روتی ہے قلم لکھتا ہے نوحہ ریحان
ہے کرم مجھ پہ شاہِ کرب و بلا کا ریحان
نوحہ جب تک نہ لکھوں روز شہہِ دیں کا نیا
آرام کہاں ۔۔۔۔

Aaram kahan
Kishte aalam may Zainab ko bhala aaram kahaan

Qatl Shabbir bhi Abbas bhi Akbar bhi huay
Kat gaye Aon o Muhammad ke bhi maqtal may galay
Lasha e ibn e Hasan ho gaya pamal e jafa
Aaram kahan

Teer jab Asghar e masoom ki gardan may laga
Deti thi khaimay ke dar par kharri bano ye sada
Bin teray chain milay kaisay meray maah laqa
Aaram kahan

Chid gaye mashk e Sakina lab e darya afsos
Bekafan khaak pe hay sher ka laasha afsos
Pyasay bachon ka koi chahnay wala na raha
Aaram kahan

Chin gayi sar se rida jal gaya asbab tamam
Baad e Shabbir namudar hui kaisi ye sham
Khoon kano se baha bachi ka daman bhi jala
Aaram kahan

Sar shaheedon ke sar e noke sina qaid haram
Aik do ka nahi seenay may bahattar ka hay gham
Bairryan pehnay huay laaghir o beemar chala
Aaram kahan

Koi mara gaya talwar se naizay se koi
Laash maqtal may kisi dulha ki paamal hui
Ho gaye bazoo e Abbas e alamdar juda
Aaram kahan

Ro ro kehti hay Sakina meray ammo aayo
Mujh ko maray na laeen aa ke inhay samjhao
Kyun nahi suntay ho deti hoon tumhay kab se sada
Aaram kahan

Bachay jo khaak pe girtay hain kuchal jatay hain
Gham se dil maoon ke seenay se nikal jatay hain
Koi sunta nahi bewayon ki faryad o buka
Aaram kahan

Ankh roti hay qalam likhta hay noha Rehan
Hay karam mujh pe sheh e Karb o balan ka Rehna
Noha jab tak na likhon roz sheh e deen ka naya
Aaram kahan