Lut gayee aal e Muhammad ke gharanay walay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



لُٹ گئے آلِ محمدؐ کے گھرانے والے
ترسے پانی کو جو کوثر کے لُٹانے والے

ہو گئی شام انہیں شام کے بازاروں میں
ایک بیمار کو لاکھوں ہیں ستانے والے

زہراؑ کہتی بخشوا دوں گی اُنہیں محشر میں
جو میرے لعل پہ آنسو ہیں بہانے والے

پانی تک تو نے نہ پایا میرے مظلوم حسینؑ
تیغ و خنجر سے پیــاس اپنی بُجھانے والے

بولی زینبؑ جو گری خاک پہ تصویرِ رسولؐ
چل بسے یاد بھی نانا کی دلانے والے

رو کے کہتی تھی سکینہؑ میرے چاچا ہو کہاں
لوٹ کر آئے نہیں پانی پلانے والے

بولی فضہ نہ انہیں مارو ذرا شرم کرو
یہ تو نبیوں کی بھی ہیں شان بڑھانے والے

تیر بے شیر کوکہتے ہوئے رویا کوثر
کیوں ہوئے ذبح زباں خشک پھرانے والے

Lut gaye aal e Muhammad ke gharanay walay
Tarsay pani ko jo Kausar ke lutanay walay

Ho gayi sham unhain Shaam ke bazaroon may
Aik beemar ko lakon hain satanay walay

Zahra kehti bakshwa doon gi unhain mehshar may
Jo meray laal pe ansoo hain bahanay walay

Pani tak tu ne maanga meray mazloom Hussain
Tegh o khanjar se pyas apni bujhanay walay

Boli Zainab jo giri khaak pe tasweer e Rasool
Chal basay yaad bhi nana ki dilanay walay

Ro ke kehti thi Sakina meray chacha ho kahan
Loat kar aaye nahi pani pilanay walay

Boli Fizza na inhain maro zara sharm karo
Ye to nabiyon ki bhi hain shaan barrhanay walay

Teer besheer ko kehtay huay roya Kausar
Kyun huay zibha zuban khusk phiranay walay