Wo khoon ro ke ye kehta raha zamanay se
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Wo Khoon ro ke ye kehta raha zamanay say
Ridaeyn cheeno naa (x2) logo mere gharanay say

Sawal-e-Aab Pay Sonay Pay Us Kay Ronay Pay (x2)
Wo Maartay Thay (x2) Sakina Ko Her Bahaanay Say

Bulaey Kis Tarha Abbas Ko Madad Kai Leeyai (x2)
Wo Berida Thee (x2) Jhijhakti Rahi Bulanay Say

Sulaya Jaata Tha Bayhosh Ker Kay Durron Say (x2)
Jagaya Jata Tha (x2) Abid Ko Taazianay Say

Kuch Isterha Sar-e-Kerbobala Wo Ujray Thay (x2)
Kay Dar Rahay Hain (x2) Abhi Tak Wo Ghar Basaanay Say

Kaha Ye Ganj-e-Shaheedan Mei Baap Kay Sar Nay (x2)
Mujhai Sakina (x2) Bulati Hai Qaid Khaanay Say

Rida-e-Saani-e-Zehra Mei Dhal Gaya Akbar (x2)
Ghubaar Utha Jo Laashon Kay Thar Tharaanay Say

وہ خون رو کے یہ کہتا رہا زمانے سے
ردائیں چھینو نہ (2) لوگوں میرے گھرانے سے

سوال آب پہ سونے پہ اُس کے رونے پہ
وہ مارتے تھے (2) سكینہ کو ہر بہانے سے

بلائے کس طرح عباسؑ کو مدد کے لئے
وہ بےردا تھی (2) جھجھکتی رہی بلانے سے

سلایا جاتا تھا بے ہوش کر کے درّوں سے
جگایا جاتا تھا (2) عابدؑ کو تازیانوں سے

کچھ اِسطرح سرِ کرب و بلا وہ اجڑے تھے
کے ڈر رہے ہیں (2) ابھی تک وہ گھر بسانے سے

کہا یہ گنج شہیداں میں باپ کے سَر نے
مجھے سكینہؑ (2) بلاتی ہے قید خانے سے

ردائے ثانی زہراؑ میں ڈھل گیا اکبر
غبار اٹھا جو (2) لاشوں کے تھرتھرانے سے