Berriyan royeen kabhi paon ke chaale roye
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



بیڑیاں روئی کبھی پائوں کے چھالے روئے
کیسے قیدی تھے جنہیں قید کے تالے روئے

جب سُنا مارا گیا پانی پلانے والا
کانپتے ہاتھوں میں سوکھے ہوئے پیالے روئے
۔۔۔۔۔بیڑیاں روئیں

جانے کیا سوچ کے شبیر بہت دیر تلک
کر کے بے شیر کو تُربت کے حوالے روئے
۔۔۔۔۔بیڑیاں روئیں

بُھولنے والے تُجھے کیسے بتائے کوئی
کس قدر تُجھ کو تیرے چاہنے والے روئے
۔۔۔۔۔بیڑیاں روئیں

بے کسی باپ کو لے آئی ہے کس منزل پر
برچھی بیٹے کے کلیجے سے نکالی روئے
۔۔۔۔۔بیڑیاں روئیں

ہائے افسوس کے جس وقت جلے تھے خیمے
دیر تک شامِ غریباں کو اُجالے روئے
۔۔۔۔۔بیڑیاں روئیں

پیاسے جسموں میں یہ پیوست ہوئے جب بھی کبھی
دیکھ کر سوکھی رگیں برچھیاں بھالے روئے
۔۔۔۔۔بیڑیاں روئیں

بھائی کی لاش ہے اور شور یتیموں کا نظیر
اک بہن ایسے میں بچےکو سنبھالے روئیں
۔۔۔۔۔بیڑیاں روئیں

Berriyan royeen kabhi paon ke chaale roye
kaise qaidi thay jinhe qaid ke taale roye

jab suna maara gaya pani pilane wala
kaampte haton may sukhe hue pyale roye
bediya royeyn...

jane kya sochke shabbir bahot dayr talak
karke baysheer ko turbat ke hawale roye
bediya royeyn....

bhoolne walay tujhe kaise bataye koi
kis khadar tujhko tere chahne walay roye
bediya royeyn....

bekasi baap ko le aayi hai kis manzil par
barchi bete ke kaleje se nikale roye
bediya royeyn...

haye afsos ke jis waqt jale thay qaime
dayr tak shame ghariban ko ujale roye
bediya royeyn...

pyase jismo may ye paywast hue jab bhi kabhi
dekh kar sookhi ragay barchiya bhaalay roye
bediya royeyn...

bhai ki laash hai aur shor yateemo ka nazeer
ek behan aise may bachon sambhale roye
bediya royeyn...