Zainab ye bayan karti ba haal pareshan aey shame e ghariban
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

زینب یہ بیاں کرتی باحالِ پریشاں
اے شامِ غریباں
بھائی میرا مارا گیا سر ہو گیا عُریاں
اے شامِ غریباں

عباس کہاں ہو میرا احوال تو دیکھو
بچوں کی خبر لو
کیوں رہ گئے دریا کی ترائی میں میری جاں
اے شامِ غریباں

مقتل تو سدھارے تھے عجب شان سے بیٹا
مادر کو ہے شکوہ
مجھ کوکھ جلی کو تھا تیرے بیاہ کا ارماں
اے شامِ غریباں

اٹھارہ بنی فاطمہ میں اب نہیں کوئی
خالق کی دوہائی
بے چین کہوں جا جائے حُر آئے ہیں مہماں
اے شامِ غریباں

جھولے کے قریب آ کے کہا بانوئے شہہ نے
کچھ تُو ہی بتا دے
شش ماہ میرا کونسے بدل میں ہے تنہا
اے شامِ غریباں

دن رات تڑپتا ہے ظفر دل کو سنبھالے
کس طرح نکالے
قبرِ شاہِ بے کس کی زیارت کا ہے ارمان
اے شامِ غریباں

Zainab ye bayan karti ba haal pareshan
aey shame e ghariban
bhai mera maara gaya sar hogaya uryan
aey shame e ghariban

abbas kahan ho mera ehwaal to dekho
bachon ki khabar lo
kyun rehgayi darya ki taraayi may meri jaan
aey shame e ghariban

maqtal to sidhare thay ajab shan se beta
maadar ko hai shikwa
mujh kokh jali ko tha tere byah ka arman
aey shame e ghariban

athara bani fathema may ab nahi koi
khaaliq ki duhaai
bechain kahoo ja jaye hur aayi hai mehman
aey shame e ghariban

jhoole ke kareeb aake kaha bano e sheh ne
kuch tu hi bata de
sheh maah mera kaunse badal may hai tanha
aey shame e ghariban

din raat tadapta hai zafar dil ko sambhale
kis tarha nikaale
qabre shahe bekas ki ziyarat ka hai arman
aey shame e ghariban