Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir
Kehtay thay Abid e muztar
Ankhon se lahoo barsa kar
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

Rakhna hay khayal e Sakina
Dukh us ke gham hi sehna
Jab soey wo ghabra kar
Tum saaya karna sar par
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

Zanjeer meri qismat hay
Aur dhoop may bhi shiddat hay
Jalti hui is bairri par
Tum ashk bahana dilbar
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

Tum sath phuphi ke rehna
Jo keh dain wo sun lena
Tum hathon ko phaila kar
Ban jana un ki chaadar
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

Jab madar e Asghar roey
Jab tak na Sakina soey
Tum aisay jagtay rehna
Jis tarha chand falak par
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

Jab tum ko pyas sataey
Aur pani bhi mil jaye
Le jana tum wo pani
Pehlay qabr e Asghar par
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

Kamsin hay abhi choota hay
Tu Haider ka pota hay
Tum laaj hamari rakhna
Chaltay rehna kaanton par
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

Zindan may jab ho jana
Durron se nahi ghabrana
Dat jana zulm ke aagay
Khutbat hamaray sun kar
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

Rehan wo kamsin bacha
Jab qaid e sitam may pohoncha
Taiwar thay Ali Akbar ke
Aabid ne kaha lipta kar
Aey Muhammad Baqir, Aey Muhammad Baqir

ؑاے محمد باقرؑ ، اے محمد باقر
کہتے تھے عابدِ مضطر
آنکھوں سے لہو برسا کر
ؑاے محمد باقرؑ ، اے محمد باقر

رکھنا ہے خیالِ سكینہ
دکھ اُس كے غم ہی سہنا
جب سوئے وہ گھبرا کر
تم سایہ کرنا سر پر
اے محمد باقرؑ ، اے محمد باقرؑ

زنجیر میری قسمت ہے
اور دھوپ میں بھی شدت ہے
جلتی ہوئی اِس پیڑی پر
تم اشک بہانہ دلبر
ؑاے محمد باقرؑ ، اے محمد باقر

تم ساتھ پھوپھی كے رہنا
جو کہہ دیں وہ سُن لینا
تم ہاتھوں کو پھیلا کر
بن جانا اُن کی چادر
اے محمد باقرؑ ، اے محمد باقرؑ

جب مادرِ اصغرؑ روئے
جب تک نا سكینہ سوئے
تم ایسے جاگتے رہنا
جس طرح چاند فلک پر
اے محمد باقرؑ ، اے محمد باقرؑ

جب تم کو پیاس ستائے
اور پانی بھی مل جائے
لے جانا تم وہ پانی
پہلے قبرَ اصغرؑ پر
اے محمد باقرؑ ، اے محمد باقرؑ

کمسن ہے ابھی چھوٹا ہے
تو حیدرؑ کا پوتا ہے
تم لاج ہماری رکھنا
چلتے رہنا کانٹوں پر
اے محمد باقرؑ ، اے محمد باقرؑ

زنداں میں جب ہو جانا
دروں سے نہیں گھبرانا
ڈٹ جانا ظلم كے آگے
خطبات ہمارے سن کر
اے محمد باقرؑ ، اے محمد باقرؑ

ریحان وہ کمسن بچہ
جب قید ستم میں پہنچا
تیور تھے علی اکبرؑ كے
عابدؑ نے کہا لپٹا کر
اے محمد باقرؑ ، اے محمد باقرؑ