Zainab hay safar may, haey khak hay sar may
Efforts: Ali Imran



زینب ؑ ہے سفر میں ہائے خاک ہے سر میں
کب ہوگی رہا قید سے کب جائے گی گھر میں

چہرے کو ذرا بالوں سے تم ڈھانپ لو بی بی
یہ لوگ شرابی ہیں تیری راہ گزر میں

تاریخ تیری جنگ کو دہراتی رہے گی
اصغرؑ جو لڑی تو نے چھوٹی سی عمر میں

اِک وقت تھا کوفہ کی شہزادی تھی زینبؑ
کس حال میں آئی ہے یہ بابا کے شہر میں

جس پردے کا ضامن تھا عباسِ ؑدلاور
ہے زخم اسی پردے کا عابدؑ کے جگر میں

تھے صرف پھٹے کپڑے اور کان بھی زخمی
عابدؑ نے اتارا جو سکینہ ؑ کو قبر میں

شبیرؑ کے ماتم سے ہائے روکنے والو
زینبؑ کی یہ سنت ہے مومن کی نظر میں

1) Zainab hay safar may, haey khak hay sar may
Kab ho gi reha qaid say (x2) kab jaye gi ghar may

2) Chehray ko zara balon say tum dhanp lo bibi
Mahol sharabi hay (x2) teri rah guzar may

3) Tareekh teri jang ko dohrati rahay gi
Asghar jo lari tu nay (x2) nanhi si umar may

4) Ik waqt tha shehzadi thi haey Kufay ki Zainab
Kis haal may aaayi hay (x2) baba ke shehar may

5) Jis parday ka zamin tha Abbase dilawar
Hay zakham ussi parday kay (x2) Abid kay jigar may

6) Thay sirf phatay kaprray aur kaan bhi zakhmi
Abid nay utara jo (x2) Sakina ko qabar may

7) Shabbir kay matam se haey roknay walo
Zainab ki yeh sunnat hay (x2) momin ki nazar may